Friday, July 27, 2012

Team Ashiyana (Bheek Mission): Details of Donation, Contribution and Amount

Dear Brother And Sisters,
اسلام و علیکم 

Here's the details about the fund raising, donations and collected things during the Team Ashiyana, Bheek Mission in last days.
Syed Adnan Ali Naqvi (Chief Volunteer) is in Peshawar for the bheek mission since last 3 days and taking part in the bheek mission.

Medicines:
Syrups: (Amount of Rs. 4000/=)
Tablets and Capsules: (Amount of Rs. 5540/=)
Oral suspensions:  (Amount of Rs. 2400/=)
Injections, Drip and other medicines: (Amount of Rs. 3000/=)

Food Stuff:
Flour      : 200kg 
Sugar      : 23kg
Rice        : 50kg
Beans     : 12kg
Salt         :5kg
Tea         : 1kg
Spices     : 150gm
Mineral Water: 1000liter 
Ghee and Oil (cooking) : 8kg
 
Clothes etc:
100 pair of clothes for children (used)
78 pairs of clothes for Women (used)
70 pairs of clothes for Men (used) 
20 pairs of shoes for children (used)
Mate for Namaz (Jaa e Namaaz): 50 (new)

Books etc:
Quran Karim: 50
Religious Books: 50
Copies: 25
Stationary etc

Amount Received as Cash collection:
Pak Rs. 7400/= (Seven Thousands, Four Hundred only) From Lahore.
Pak Rs. 5000/= (Five Thousands only) from Karachi.
Pak Rs. 4850/= (Four Thousands, eight hundred and fifty only) Rawalpindi.
Pak Rs. 5000/= (Five Thousands only) from Peshawar.                   
Total Amount: Rs. 22250/= (Twenty two thousands, Two hundred, fifty only

Amount Received in Bank A/C:
No new transaction has been found in the bank.
Current Balance is Pak Rs. 070/= (Seventy only)

We are thankful to our brother and sister from Karachi, Lahore, Rawalpindi and Peshawar for there efforts to collect the things and donation for Team Ashiyana.
May ALLAH accept our efforts and give us courage to do this kind of the work in proper manners. Aameen.


We (Volunteers of  Team Ashiyana) are also very thankful to the following for there contributions and help for us.
Ms. Badar Un Nisa, Ms. Faryal Zehra, Ms. Asma Hafeez, Ms. Talat, Ms. Nazneen, Mr. Mansoor, Mr. Zafar, Mr. Ali, Mr. Azam and all others friends and family members. May ALLAH gives you ajr e Azeem for your work - Aameen.

We (Team Ashiyana) are also thankful for our Friends for there donations and contact, which were very helpful for us in past.
Contriutor and our Donor of Past:
Abdullah Bhai (U.S), 
Bhai Hidden name (Qatar)
Bhai Hidden name (Qatar)
Javaid Aslam Bhai (U.S)
Nighat Baji (K.S.A)
Aslam Bhai (K.S.A)
Ghulam Sarwar Bhai (Germany)

Recent (last year donor's)
Ahmad Ali Bhai (Masqat)
Rabia Baji (France)
Umar Khan Bhai (U.K)
Umair Asif Bhai (Singapore)
Usman Bhatti Bhai (U.A.E)
Sultan Bhai (Azad Kashmir)
Rabia Baji (K.S.A)

We are also many thankful for the support of Local Administration of F.A.T.A (Federal Administrative Tribal Areas), Local Security Agencies, Police and Frontier Core, Medical Core of Pakistan Army and local Waziristani brother and sisters for there support and courage which is the cause we are still working in those areas. May ALLAH give all of the Ajr-e- Azeem, Aameen.

We are thankful for the call (at-least they are calling us to know our condition and situation) Official / Unofficial of NDMA (National Disaster Management Authority), Edhi Trust, Al-Huda Trust, Officials of some Media Group for there courage and prayers. May ALLAH gives all of them Ajr-e-Azeem, Ameen.

Dear Brother and sisters,
Whatever we are collecting during the bheek mission (small or large amount of things or money) are all very important for us. We are assuring you that every single penny will be distributed with all of justice into the deserving peoples of the said areas - Insha ALLAH.

Once again thank for your Prayers, Contributions, Donations and hand of courage to us. And we hoe for the same in the future, Insha ALLAH.

Jazak ALLAH Kher
On the behalf of Syed Adnan Ali Naqvi
Chief Volunteer,
Ashiyana Camp,
3km, Datta Khel, Miran Shah Road.
North Waziristan - Pakistan.

For the further details or contact:
team.ashiyana@gmail.com
s_adnan_ali_naqvi@yahoo.ca
s.adnan.a.naqvi@gmail.com
faryal.zehra@gmail.com
mansoorahmed.aaj@gmail.com

Or call / text us at: +92 345 297 1618

Note:
Adnan ki Dairy (عدنان کی ڈائری - زلزلہ بیتی ) is now available at BBC Urdu Web site click on the link blow to view it: 
http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/specials/1640_adnan_diary_ms/page21.shtml

To view Pages from a Volunteer of Team Ashiyana (Nort Waziristan) please click on the link below:
http://waziristandairy.blogspot.com


To view Syed Adnan Ali Naqvi Work during the days of Earthquake  - 2005, please click on the link below:
http://pakistaniadnan.blogspot.com


 

 

Wednesday, July 25, 2012

سید عدنان علی نقوی کی دعا

محترم دوستوں اور ساتھیوں اسلام و علیکم 

ماہ رمضان کی برکتیں اور رحمتیں ہم سب سمیٹ رہے ہیں، ان برکت بھرے لمحات میں ہم کو اور آپ کو ہر لمحہ الله پاک کی عظمت، بڑھائی، شان کا ذکر کرتے رہیں. 

ماہ رمضان ہم کو درس دیتا ہے اخلاص کا، امن کا، رواداری کا، ایک دوسرے کے خیال کرنے کا. یہ ماہ ہم کو تربیت دیتا ہے کے ایک مسلمان کے فرائض کیا ہیں؟ اور کس طرح اس دنیا میں اپنی اور دوسرے انسانوں کی فلاح کا خیال رکھنا ہے. 

میری الله پاک سے دعا ہے کہ "اے میرے پروردگار، مجھ کو ہمت دے،   حوصلہ دے، صبرعطا فرما کہ میں تیرے نیک بندوں میں شمار ہوں. مجھ کو ایک ایسا انسان بنا جو تیرے بتاۓ ہوے راستے پر چلے، اور میرے فلاحی کاموں کو آسان فرما، میرے اور میرے ساتھیوں کے لئے غیب سے اسباب مہیا فرما، ایسے اسباب جو ہم سب کے لئے فلاح کا سبب بن سکیں. اے میرے رب، ہم لوگ جن جگہوں پر فلاحی خدمات سرانجام دے رہے ہیں وہاں ہم کو ہمیشہ جانی اور مالی نقصانات کا اندیشہ رہتا ہے، ہماری حفاظت فرما، مجھ کو اور میرے ساتھیوں کو پوری امانت داری، دیانتداری کے ساتھ مستحق لوگوں تک ان کا حق پہچانے کی توفیق عطا فرما. 
میرے رب، ہم اچھی طرح جانتے ہیں کہ ہم جہاں ہیں وہاں کیا ہو رہا ہے اور کیوں ہو رہا ہے، ہم کو سچ اور حق کا ساتھ دینے کی  عطا فرما. ہماری، ہمارے اہل       خانہ کی، ہمارے دوستوں کی، ہمارے ساتھیوں کی، ہمارے مسلمان بھائی بہنوں کی، سارے عالم اسلام کی  مغفرت فرما، اس ماہ مقدس کی برکت سے ہمارے کبیرہ،   صغیرہ گناہوں کو معاف فرما، اور ہم کو ہدایت عطا فرما. ہمارا خاتمہ ایمان پر فرما. آمین. اے الله، ہماری دعاؤں کو اپنی بارگاہ میں قبول فرما. آمین."

میرے ساتھیوں اور دوستوں، لکھنے اور کہنے کے لئے ابھی بہت کچھ ہے جو انشاالله بہت جلد آپ لوگوں کے ساتھ ضرور share کروں گا فلحال کے لئے         اتنا ہی کافی ہے. 
الله پاک آپ سب کا اور میرا حامی و ناصر ہو - آمین 

جزاک الله خیر 


Tuesday, July 24, 2012

Syed Adnan Ali Naqvi (Volunteer, Team Ashiyana North Waziristan) in Peshawar for Bheek Mission.

عزیز دوستوں، ساتھیوں، ٹیم آشیانہ کارکنان اور سب پڑھنے والوں کو میری (سید عدنان علی نقوی) کی جانب سے اسلام و علیکم. 

میں آج ہی دتہ خیل - شمالی وزیرستان سے پشاور شہر آیا ہوں تاکہ اپنے ساتھیوں کے ہمراہ ٹیم آشیانہ کے لئے بھیک مشن سے کچھ امداد اکھٹا کرسکوں. 

مجھ سے ملاقات کرنے یا بات کرنے کے لئے آپ مجھ سے رابطہ کر سکتے ہیں. 
+92 333 342 6031
+92 345 297 1618
s_adnan_ali_naqvi@yahoo.ca
s.adnan.a.naqvi@gmail.com

Dear Friends, members of Team Ashiyana and respected Readers,
اسلام و علیکم 

I've reached Peshawar from Datta Khel, North Waziristan. Alhamdul ALLAH.

I am here to join Bheek Mission for Ashiyana Camp, North Waziristan. Anybody who wants to meet or contact with me please call me or text me at;
+92 333 342 6031
+92 345 297 1618
s_adnan_ali_naqvi@yahoo.ca
s.adnan.a.naqvi@gmail.com

I am located at (Masjid) Peshawar University Campus.
Jazak ALLAH 
Syed Adnan Ali Naqvi

Monday, July 23, 2012

Drone Attack in Shawwall Velly, North Waziristan - Pakistan

Shawwall Valley North Waziristan
Assalam O Alikum,
Dear all,


This is to inform to all of our friends, family members and readers that another drone attack has been made b/w Aasr - Maghrib at Shawal Valley  North Waziristan - Pakistan.
Team Ashiyana just left after its Free Medicines supply in that valley and save - Alhmd Ul ALLAH.
We are gathering information about this attack, which will be updated shortly.

As now there are 12 person killed and several injured in this attack.

اسلام و علیکم 
محترم دوستوں ساتھیوں ٹیم آشیانہ کے کارکنان کے گھر والوں اور پڑھنے والوں کو اطلاع دی جاتی ہے کہ آج نماز عصر اور مغرب کے درمیان شوال کی وادی (شمالی وزیرستان) میں ایک ڈرون حملہ کیا گیا ہے جس میں ہماری اطلاع کے مطابق اب تک ١٢ افراد ہلاک اور بہت زخمی ہیں.
ٹیم آشیانہ کل (گزشتہ) مختصر پیمانے پر ادویات کی تقسیم کے لئے شوال کی وادی میں موجود تھی اور اب اپنے بیس کیمپ دتہ خیل میں واپس آچکی ہے. ہم تمام پڑھنے والوں سے اپیل کرتے ہیں کے آپ سب ٹیم آشیانہ کے کارکنان کی حفاظت کے لئے دعا گو رہیں.
 اس حملے کے بارے میں معلومات اکھٹا کری جا رہی جو بہت جلد یہاں (اس بلاگ پر) اپ ڈیٹ کر دی جائیں گی.

کارکن ٹیم آشیانہ 
شمالی وزیرستان.
Shawwal Valley North Waziristan

Sunday, July 22, 2012

List of Urgent Required Items for Ashiyana Camp, North Waziristan.

Dear Brother, Sisters and Readers, اسلام  علیکم 


Here's is the list of Urgent required items for the Team Ashiyana, Datta Khel - North Waziristan, Pakistan.

Medicines:
Team Ashiyana is collecting medicines in Bheek Mission from Karachi, Lahore, Rawalpindi  and Peshawar. We need extra amount of medicines for all ages and all diseases including life saving drugs and medicines a short list of medicines is given below. We are requesting you to to please donate us as much as you could to save the life of suffering peoples in North Waziristan. 

Syrups And suspensions:
Brofin, Ponstan, Panadol, Calpol, Mucain, Ulsanic, Flygel, Flyzol, Britanyl, Metronidazol, Liveract, Augmenten, Velosef, Leaderplex, Promethazine, Ponstan Fort, Marzine,
And Anti-biotic Syrups (Urgently Required)

Tablets and Capsules:
Perasetamol, Panadol, Panadol Extra, Ponstan Fort, Gravinate, Marzine, Lomotive, Flygel, Bascopan, Metodine, D.F, Amoxil, Augmenton, Folic Acid, Trisil, Velosef, Cafcol,Surbex-z, Surbex-b and Anti-biotic Tablets (Urgently Required).

Other Medicines:
O.R.S, Peditral Water, Dexta Drip, Syringes, Injection for pain relief, multivitamins etc
(Urgently Required)


Food Stuff (in raw)
Ashiyana camp has the responsibility of 40 families and about 300 Poor, Sick, Orphans, and widows to supply them two time food in Datta Khel, North Waziristan. for that we need an extra amount of food stuff in raw condition.
A short list is as under:
List of Urgently Required Food Stuff:
1. Wheat Flour (Atta): 2000kg (for a month)
2. Rice (Chawal): 2000kg (for a month)
3. Sugar (Chini): 800kg (for a month)
4. Beans (Dalain): 1200kg (for a month)
5. Cooking Oil / Ghee: 800kg (for a month)
6. Salt (Namak): 200kg (for a month)
7. Spices (Mirch, dhnya, haldi, etc): 600kg (for a month)
8. Milk Powder: 1000kg (for a month)
9. Tea: 800kg (for a month)


General Items:
Tents 8' / 10': 2 (two)
Soap (for washing hand and clothes): any quantity (if available)
Plastic Sheets (to cover goods and tents from raining): any quantity
Kerosene Oil: any quantity 
Match Box: any quantity
Biscuits, Wafers, etc for kids only: any quantity
Jug, Glasses, Cups, Plates, Dishes, etc: (Old and if available any quantity)

Books, Copies, & Stationary:
Books from Class 1 to 10th: any quantity (most welcome for old / used books)
Copies: any quantity
Pencils, Shopners, Erasers, Pen etc: in any quantity
Black Board with chalk: 2 (two) 
Mat or Carpet (or any thing which we can use to sit on the ground): any quantity.

Dear Brother & sisters, 
Team Ashiyana is a social working group we are working with our very limited resources for the poor, sick, Orphans, and Widows in North Waziristan. 
You are all requesting to give us a hand of courage with your prayers, donatations and contributions.
We will update you about our upcoming social projects and daily social working routine at North Waziristan.
We are not looking for your money or wealth, We are looking for the things which can be help to save many life in this area (North Waziristan).

You can contact us at any time via email or given number, as our volunteer can collect the goods from Karachi, Lahore, Rawalpindi & Peshawar.
Our Email:
team.ashiyana@gmail.com
faryal.zehra@gmail.com
s_adnan_ali_naqvi@yahoo.ca
mansoorahmed.aaj@gmail.com
Our contact:
+92 345 297 1618

Our location:
Datta Khel, (Link Road Miran Shah). North Waziristan - Pakistan



If you wanna contribute with your funds (in cash) so please use the following account:
"Ashiyana"
Ms. Badar un Nissa.
 
A/c # 0100-34780.
 
United Bank Limited.
 
Gulistan e Joher Branch. (1921)
 
Karachi, Pakistan.
 
Swift Code:UNILPKKA
  
Brother and sisters, here's a lot of the peoples are living under the poverty level, they need our assistance and help. 
We are waiting for the help from our brother and sisters.


Jazak ALLAH Kher
Volunteer
Team Ashiyana, Datta Khel - North Waziristan. Pakistan.
A group of Friends of Syed Adnan Ali Naqvi.

Saturday, July 21, 2012

شمالی وزیرستان: ٹیم آشیانہ کے کیمپ میں ایک بچے کی ناگہانی موت اور ہمارا غم


محترم دوستوں  ساتھیوں، اسلام و علیکم.
آپ کی دعاؤں، محبت ، خلوص اور مدد کے وعدوں کا بہت شکریہ، ہماری دعا ہے کہ الله پاک آپ سب کو ماہ رمضان کی برکتیں، نعمتیں اور رحمتیں عطا فرماے، ساتھ آپ سب کو سدا خوش رکھے - آمین.
ٹیم آشیانہ اس وقت دتہ خیل میں مقیم ہے، اور فلاحی خدمات میں مصروف ہے، جس کی تفصیلات جیسے ہی ہم تک پہنچتی ہیں ہم آپ کو آگاہ کرتے جاتے ہیں. آج کی ڈائری اور آشیانہ کیمپ شمالی وزیرستان کی تفصیلات جو ہم کو ملی ہیں وہ آپ کو دی جا رہی ہیں. الله پاک ہماری محنت، اور فلاحی جذبے کو قبول فرماے اور ہم کو مزید فلاحی کام کرنے کی توفیق، ہمت، صبر حوصلہ اور استقامت عطا کرے - آمین.
آج کی اپ ڈیٹ ڈائری ملاحظہ ہو:
=====================================================================

رات تو جیسے تیسے گزر ہی گئی، ساری رات دونوں بچوں کی فکر اور دیکھ بھال میں ہی سوتے جاگتے رہے، فجر کے وقت ڈاکٹر آصف نے بتایا کہ وہ جو بھی کر سکتے تھے کر چکے ہیں مگر دونوں بچوں کی حالت میں کوئی خاص بہتری نہیں آرہی ہے، اسی لئے دن ہوتے ہی ان بچوں کو جتنا جلدی ممکن ہو یہاں سے میران شاہ منتقل کر دیا جاۓ تو اچھا ہوگا. ہمارے پاس ٹرانسپورٹ کا کوئی انتظام نہیں ہے، اکرم بھائی سے ایک دفع پھر کہا گیا کہ وہی کچھ کر سکتے ہیں تو کریں.
 میں نے سب کے ساتھ بوجھل دل اور تھکن کے ملے جلے جذبات کے ساتھ نماز ادا کری، اور ایک دفع پھر بیمار بچوں کی طرف آگیا. مجھ کو کل لگائے گئے میڈیکل کیمپ کی تفصیلات بھی لکھنی تھی وہ رات کو ڈائری لکھنے کی وجہہ سے رہ گئی تھی تو اب میں نی ایک دفع پھر قلم اور کاپی اٹھائی اور کل کے میڈیکل کیمپ کے اعداد و شمار لکھنے شروع کیے.

گزشتہ روز لگائے گئے میڈیکل کیمپ کے اعداد و شمار:
کیمپ صبح ساڑھے آٹھ بجے لگایا گیا جو ظہر اور عصر کی نماز کے وقفے کے ساتھ شام ساڑھے پانچ بجے تک جاری رہا. میڈیکل کیمپ کل ٩٧ مریض لائے گئے جن میں ٦٣ بچے اور باقی مرد  شامل تھے


میڈیکل کیمپ میں ایک بزرگ خاتون (شاندانہ عمر ٨٠-٨٥ برس) کی لائی گیں. جن کو الٹی، پیٹ درد اور کمزوری کی شکایات تھی، ڈاکٹر آصف کے چیک اپ کرنے پر پتہ لگا ان خاتون میں (ایچ، آی، وی) بیماری ہو سکتی ہے (ان خاتون کو مقامی کارکنان کی مدد سے کل ہی میران شاہ منتقل کر دیا گیا)


میڈیکل کیمپ میں تین (٣) بچے جن کی عمریں ٨-١٢برس کے درمیان تھی لائے گئے، ان بچوں کو تیز بخار کے ساتھ جسموں پر دانوں کی شکایات تھی. ڈاکٹر صاحب کے چیک کرنے پر پتہ لگا کے یہ تینوں بچے خسرہ کا شکار ہیں. ان میں سے ایک بچے کے گھر والے ہمارے اسرار کرنے پر بچے کو میران شاہ لے گئے ہیں باقی دو (٢) بچے ابھی آشیانہ کیمپ میں ہی موجود ہیں جن کی حالت بہتر نہیں ہے.


ادویات جو ہم کو کارکنان نی امدادی طور پر روانہ کاری تھی اچھی خاصی اس کیمپ میں تقسیم کر دی گئی ہیں باقی ادویات اور آنے  والی امداد کے ساتھ ایک اور میڈیکل کیمپ جلد ہی لگایا جاۓ گا - انشا الله.


میرا ذاتی تجربہ اس میڈیکل کیمپ میں بہت تکلیف دے رہا ہے، میں چہ کر بھی یہاں کے لوگوں کے لئے کچھ خاص نہیں کر پایا ہوں صرف ذاتی حثیت سے تسلی  اور ادویات کی تقسیم میں ٹیم آشیانہ کے کارکنان کا ہاتھ ہی بٹا سکا ہوں.
میڈیکل کیمپ سے چیک اپ اور ادویات حاصل کرنے والے مقامی افراد کی فہرست اس رپورٹ کے ساتھ منسلک ہے.


 عدنان بھائی، اور دیگر کارکنان آج نماز فجر کے بعد سے ہی راشن کی تقسیم کے نظام کو ترتیب دی رہے ہیں. جو انشا الله آج شام تک تقسیم کرنا شروع کر دیا جاۓ گا.


اپنی رپورٹ لکھ لینے کے بعد میں آج ناشتہ (صبح کا کھانا) بنانے والے ساتھیوں میں گھل مل گیا، آج میری ذمہداری ہے کے میں کھانے کا انتظام سمبھالوں.


عدنان بھائی، اور فیصل بھائی (لاہور والے) آج یا کل کسی وقت پشاور اور اسلام آباد جانے کا پروگرام بنا رہے ہیں اور آج ناشتے کے دوران اس بات پر بحث ہوئی کہ عدنان بھائی کے بعد یہاں (دتہ خیل، شمالی وزیرستان) میں کون ٹیم آشیانہ کی نگرانی کرے گا. اکرم بھائی، اور کچھ دوستوں نے میرا نام تجویز کیا. مگر عدنان بھائی نے (بوجھہ) میرا نام رد کر دیا. اور ایک مقامی کارکن، گلریز خان کو ٹیم آشیانہ کی نگرانی کی ذمہداری دینے کا فیصلہ کیا گیا. (مجھ کو نگران نہ بنانے کے فیصلے کی عدنان بھائی نے جو وجھہ بیان کاری وہ بلکل سہی اور درست تھی، میں اکثر بہت زیادہ جذباتی ہو جاتا ہوں اور جذباتی ہونے کے بعد کسی بھی کام کو سہی طرح یا عقل اور شعور کے ساتھ کرنے کی صلاحیت کھو دیتا ہوں، جبکہ یہاں کے حالات ایسے نہیں ہیں جن میں کسی بھی طرح کے جذباتی کام یا فیصلے کی کوئی گنجائش ہو) عدنان بھائی نے مجھ کو سب کے سامنے اور بعد میں علیحدہ سے اپنی ترجیحات سے آگاہ کیا جس سے میں پوری طرح مطمئن ہوں.


عدنان بھائی اور ٹیم آشیانہ کے مقامی کارکنان نی مجھ سے ایک دفع پھر ڈائری یا یادداشت لکھتے وقت بہت احتیاط سے کام لینے کو کہا، (ہو سکتا ہے کے میری پچھلی ڈائری یا تحریر میں کوئی ایسی بات سامنے آگئی ہو جو ٹیم آشیانہ یا مقامی افراد کے لئے  نقصان دے ثابت  ہو سکتی ہو، میں جو محسوس کرتا ہوں اور جو یہاں ہو رہا ہے وہ سادہ ترین الفاظ میں لکھ دیتا ہوں، ایک دفع پھر میں اپنے دوستوں اور ساتھیوں سے کہوں گا کے وہ میرے صفحات یا ڈائری کو اپ ڈیٹ کرتے وقت سارے صفحات  کو ایڈیٹ کر کے لکھا کریں، اور کوشش کریں کے حقیقت کو مسخ نہ کیا جاۓ، ہم یہاں کسی بھی طرح کی مشکل یا مخالفت کا سامنا کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہیں اور نہ ہی ہمارا مقصد یہاں کسی گروپ، گروہ یا تنظیم کے حق میں یا مخالفت میں کم کرنے کا ہے، ہم یہاں صرف ایک ہی مقصد اور مشن لے کر یہاں بیٹھے ہیں اور وہ ہے سہی اسلامی تعلیمات کے مطابق انسانیت کی فلاح اور پاکستان کے بے بس لوگوں کے لئے کم کرنے کا)


اکثر یہ سوال میرے دماغ میں بھی آتا تھا کے اگر ہم کو فلاحی کام کرنے ہی ہیں اور انسانیت کی خدمات کرنی ہی ہے تو ہم یہاں اتنے دشوار گزر اور مشکل علاقے میں کیوں موجود ہیں؟ جہاں ہر وقت شدت پسندوں (اس لفظ کو لکھنے کے لئے منع کیا گیا ہے، مگر میں ان لوگوں کو اور کس لفظ سے لکھوں؟ اگر کوئی رہنمائی کرے تو میں شکر گزار رہوں گا). کی طرف سے کسی نہ کسی کروائی  کا خدشہ رہتا ہے، یا طالبان جیسے عناصر کی آمد کی فکر، یا کچھ نہیں تو ڈرون (بلی جیسے ڈرون) کی اچانک  ہتیار بند آمد کی تیاری. مگر کچھ عدنان بھائی، کچھ ٹیم آشیانہ کے کارکنان اور کچھ یہاں کے حالات کو سمجھتے ہوے اندازہ ہو گیا کے پاکستان کے کسی بھی علاقے میں فلاحی کام کرنا بہت آسان ہے، شہروں میں تو کوئی مسلہ ہی نہیں، مگر کوئی بھی یہاں (شمالی وزیرستان) یا ان جیسے علاقوں میں آنا اور کام نہیں کرنا چاہتا (وجوہات جو اپر بیان کری ہیں وہی ہیں). کوئی سیکورٹی  رسک کا بہانہ کرتا ہے کوئی کچھ بھی بہانہ، (اس سلسلے میں مجھ کو ذاتی تجربہ بھی ہے - کچھ تفصیل لکھ دیتا ہوں)


ملکی فلاحی اداروں سے بات چیت اور نتیجہ:
جب میں کراچی میں تھا تو اکثر عدنان بھائی اور ٹیم آشیانہ کی اپیل مجھ کو ملا کرتی تھی، میں نے عدنان بھائی کے کہنے پر ہی    کراچی میں موجود مختلف فلاحی اداروں سے رابطہ کیا جن میں دو (٢) بڑے فلاحی ادارے تھے، مجھ کو بہت افسوس ہے کے میں یہاں چہ کر بھی ان اداروں کے  نام نہیں لکھ سکتا. بہرحال، ان رابطوں کے نیتجے میں ان اداروں کے کرتا دھرتا افراد سے کافی ملاقاتیں ہوئی، کچھ ملاقاتوں میں ایسا بھی محسوس ہوا کے جیسے یہ لوگ بھی وہاں (شمالی وزیرستان) جا کر کام کرنا چاہتے ہیں. مگر جب کام کا وقت آیا تو تمام لوگ ہی ایک دم پیچھے ہٹ گئے ہن ہم کو کچھ امدادی سامان جیسے، کپڑے، کفن، کچھ ادویات  وغیرہ ضرور ملیں جس کے لئے ہم ان اداروں کے آج تک احسان مند اور شکر گزار ہیں. اس سے زیادہ یہ نامی گرامی ادارے  آج تک کچھ بھی نہیں کر سکے (ایک اور وجہہ جو مجھ کو سمجھ آتی ہے وہ یہی ہے کے یہاں کام کرنے کے دوران ان اداروں یا لوگوں کو وہ شہرت یا نام نہیں مل سکتا جو یہ لوگ شہروں میں دکھا دکھا کر کام کر کے حاصل کر سکتے ہیں، عدنان بھائی بلکل سہی کہتے ہیں کہ "جو دیکھتا ہے وہی بکتا ہے.")


اب ہم جیسے لوگ تو ہمیشہ ہی میڈیا یا نام، شہرت سے دور ہی رہتے ہیں، عدنان بھائی کا فلسفہ یہی ہے کہ جو فلاحی کام نام کے لئے کیا گیا وہ کام نہیں بلکے گناہ ہے اور اس طرح سے ہم الله کی نظروں میں اور اپنے کام سی مخلص نہیں رہ سکتے (اس کا تجربہ عدنان بھائی کو  بی بی سی اردو سروس کے لئے زلزلہ نامہ لکھتے وقت ہوا).


آج کا دن:
خیر آج کا دن بھی کچھ مختلف نہیں تھا. دونوں بچے جو آشیانہ کیمپ میں موجود ہیں کی حالت بہتر ہوتی نذر نہیں آتی، دونوں ہی بچوں کا بخار کم ہونے کا نام نہیں لے رہا ہے اور اب بچوں کو الٹی کی شکایات بھی ہو گئی ہے، ڈاکٹر آصف پہلے ہی ایک رات گزار چکے تھے واپس میران شاہ جا چکے ہیں، عدنان بھائی ٢-٣ دن میں پشاور اور اسلام آباد جانے کا سوچ رہے ہیں. یہاں سے دور موجود کارکنان سے ملی معلومات کے مطابق ہمارے کارکنان اور ہمدرد ٹیم آشیانہ کے لئے امدادی سامان جمع کرنے میں مصروف ہیں.  (الله پاک ان کارکنان کی مدد کرے اور ہمت دے، مجھ کو بہت اچھی طرح اندازہ ہے کے ہم جیسے لوگوں کو امدادی سامان جمع کرتے وقت کس کس طرح کی باتیں سننا پڑتی ہیں اور مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے).


راشن کی تقسیم کی منصوبہ بندی کرنے کے بعد ہم نے دستیاب راشن اور جن لوگوں (خاندانوں) میں راشن تقسیم کرنا ہے کی فہرست بنائی. میں hیہ کام پہلی دفع کر رہا ہوں تو پوری کوشش کر رہا تھا کے پرانے اور تجربہ کار کارکنان سے بار بار مشورہ کروں. ١١ بجے صبح تک میں لکھت، پڑھت کے کام سے فارغ ہو گیا تھا. اگلا مرحلہ ایسے گھر اور خاندانوں کی نشاندہی کرنے کا تھا جو راشن حاصل کرنے کے اہل ہوں، (میرے نزدیک تو یہاں ہر کوئی راشن لینے کا مستحق ہے، مگر ہمارے فنڈز اور دستیاب راشن اتنے نہیں کے ہم سب کو ہی راشن دے سکیں). میں یہ کام تنہا ہی کرنا چاہتا تھا، مقامی افراد کی مدد اگر لیتا تو بہت ممکن تھا کے وہ اپنے جن پہچان کے لوگوں سے ہی مجھ کو ملواتے، ابھی میں اس کام کے لئے نکلنے ہی والا تھا کہ، میرے اسکول کے بچے آنا شروع ہو گئے، میں نے صبح سی اس بارے میں سوچا ہی نہیں تھا، ہمارے پاس کل دو (٢) ٹینٹ ہیں ایک ٹینٹ میں ٹیم آشیانہ راشن کے پیکٹ بنا رہی ہے اور دوسرے ٹینٹ میں دونوں بچے موجود ہیں جہاں ان کے ساتھ آئے ہوے لوگ بھی. رات بھر ہلکی بارش ہوئی تھی جس کی وجہہ سے کھلی جگہ میں بیٹھنے کا کوئی انتظام نہیں ہو سکتا تھا. میں نی بچوں کو ظہر کی نماز کے بعد آنے کا کہا. بچے ادھر ادھر بکھر گئے اور میں ایک مقامی ساتھی کے ہمراہ پہلی دفع دتہ خیل کی گلیوں میں نکل پڑا (پہلی دفع اس لئے کے جب بھی میں یہاں آیا ہوں صرف آشیانہ کیمپ یا ان کے ساتھ جہاں جہاں میڈیکل کیمپ لگا وہی تک گیا ہوں، مقامی لوگوں سے راہ  و رسم اور تعلقات  قائم کرنے کا یا بنانے کا کوئی موقع نہیں ملا صرف آشیانہ کیمپ تک جو آیا اسی سے ہی بات ہو سکی. بلال اور اکرم بھی جو ہمیشہ ٹیم آشیانہ کے ہمراہ ہوتے ہیں تو ان سے بہت اچھی بات چیت ہو گئی ہے).


دتہ خیل، میران شاہ اور میر علی کے بعد شمالی وزیرستان کا مشور ترین علاقہ ہے یہاں کی اکثر آبادی مقامی قبائل پر مشتمل ہے، مقامی زبان پشتو یا وزیری ہے، یہاں کے لوگ نہایت سیدھے سادھے مگر اسلامی شدت پسندوں، طالبان یا رجعت پسندوں کی طرف مائل سوچ اور فکر کے حامل ہیں، خیبر پختونخواہ کے دوسرے علاقوں کی طرح یہاں کے لوگ بھی اپنی خواتین کو پردوں میں رکھنے کے حامی ہیں اور خواتین نہایت پردے میں رہتی ہیں، (میں نے خود بہت کم خواتین کو یہاں دیکھا ہے اور جو دیکھی بھی ہیں وہ بہت پردے میں اور امر رسیدہ خواتین ہیں). چھوٹی عمر کے بچے بچیاں مجھ کو یہاں گلیوں میں نظر آییجن کو گلیوں میں بھاگتا، کھیلتا دیکھ کر مجھ کو بہت اچھا لگا. میں ابھی تک بہت مشکل سے مقامی زبان سمجھ سکتا ہوں اسی لئے ایک مقامی کارکن میرے ساتھ تھا، ہم لوگ دتہ خیل کے بازار کی طرف نکل آے یہاں کافی چہل پہل تھی اور اکثر افراد رمضان کے حوالے سے خریداری کرنے میں مصروف تھے، (بازار کو دیکھ کر مجھ کو کراچی اور گھر یاد آگیا). یہاں ایک کریانہ کی دکان پر میں نے ایسے ہی کچھ چیزوں کے دام معلوم کے تو میری روح کانپ گئی ، شکر (چینی) ٢٠٠ (دو سو) روپے کلو مل رہی تھی. اس کے علاوہ بھی ہر چیز کی قیمتیں آسمان سے باتیں کر رہی تھیں. پتہ نہیں یہاں کے لوگ کیسے یہ چیزیں خرید رہے ہونگیں. بازار میں رش نہیں تھا بس افراد کی چہل پہل تھی، میں عدنان بھائی کی دی ہوئی پرانی لسٹ لے کر ان لوگوں سے ملنا چاہتا تھا جو پہلے ٹیم آشیانہ سے امداد لیتے رہے ہیں.


ظہر کی نمازتک میں اچھے خاصے لوگوں سی مل کر کافی معلومات  کر چکا تھا. اب صرف لسٹ کو آخری شکل دینا باقی تھا. جو کہ ٹیم آشیانہ کے کارکنان سے مشورہ کر کے ہی  ہو سکتی تھی.


ہم نے ظہرکی نماز سب ساتھیوں کے ہمراہ ہی ادا کری، نماز سے فارغ ہوے ہی تھے کہ  افسوس ناک خبر نے ہمارے ہوش اڑا دے.


آج کے دن کی اور میرے لئے نہایت بری اور افسوسناک خبر:


آشیانہ کیمپ میں جو دو (٢) بیمار بچے موجود ہیں ان میں سے ایک بچے کی حالت بہت زیادہ خراب ہو چکی تھی. ہم سب بھاگے بھاگے جب ان بچوں کی طرف پہنچے تو بچا بہت بری حالت میں تھا ہمارے پاس اس وقت کسی ڈاکٹر کا انتظام نہیں تھا، عدنان بھائی نے چیختے ہوے اکرم بھائی اور باقی کارکنان کو آس پاس کسی  ڈاکٹر کے انتظام کرنے کے لئے کہا. جو لوگ یہاں کے مقامی تھے کسی ڈاکٹر کو دیکھنے کے لئے گئے. میرے خود کی ہمت جواب دے رہی تھی. بہت مشکل اور کرب ناک وقت ہم لوگ یہاں دیکھ رہے ہیں. میرے ہاتھ خد با خد دعا کے لئے اٹھ گئے. (یا الله، یہ کیسا امتحان ہے؟ ہم یہاں صرف تماشا ہی دیکھتے رہیں گے؟ یا یہاں ان لوگوں کی کی مدد کرنے کے لئے کوئی ہے گا بھی یا نہیں؟) اکرم بھائی واپس آئے تو ان کے ساتھ ایک صاحب موجود تھے جو ڈاکٹر تو نہیں مگر اچھے پیرا میڈیک ضرور تھے. انہوں نی بچے کی نبض چیک کری اور بخار بھی بچے کا بخار بہت تیز  تھا اور بچہ بری طرح کراہ رہا تھا. ان صاحب نے ہم کو بتایا کے جو دوائیں ہم اس بچے کو دے رہے ہیں وہ اس وقت کے لئے ناکافی ہیں، بچے کو اسپتال کی اور بہتر دواؤں کی فوری ضرورت ہے. یہ اب ہمارے لئے ممکن نہیں رہا تھا. بس دعا ہی کر سکتے ہیں. 


اورمیں سارے کام چھوڑ کر اس بچے کے ساتھ ہی بیٹھ گیا میرے اسکول کے جو بچے آئے تھے ان بچوں کو عدنان بھائی اور بلال نے دوسرے ٹینٹ میں بیٹھا کر آگے کا سبق دیا ہم سب ہی بہت بری طرح پریشان تھے کہ کیا کری؟ الله پاک ایسا مشکل وقت سے ہم سب کو محفوظ رکھے - آمین. بچے کے ساتھ آئے ہوے اس کے گھر والے اب صورت حال کو سمجھ رہے تھے اور ہم سی بچے کو واپس اپنے گاؤں (گھر) لے جانے کی ضد کر رہے تھے، یہاں (دتہ خیل) سے ان کے گاؤں کا سفر ایک گھنٹے کا ہوگا راستہ انتہائی دشوار گزار ہو چکا ہے. ہلکی ہلکی بارش نے سفر اور مشکل کر دیا ہے. ہم سب بہت بری طرح الجھن میں تھے کے کیا کریں اور کیا نہ کریں. میں آج پہلی دفع عدنان بھائی کی طرح بار بار آسمان کی جانب دیکھ رہا تھا. اور کسی غیبی مدد کا انتظار کر رہا تھا. مگر کوئی مدد نہ آئی.


قریب تین (٣) بجے اس بچے کی سانسیں بہت تیز ہو چکی تھی ہمارے پاس اس بچے کے سر اور پیروں کو بار بار دھونے کے علاوہ کوئی اور علاج نہیں تھا. 
اور اس بچے کے والد اس بچے کا سر اپنی گود میں رکھ کر رو رہے تھے. ساتھ ساتھ ہم سب دعا کر رہے تھے کے الله پاک اس بچے کو صحت عطا کرے، مگر الله پاک کو کچھ اور ہی منظور تھا.


بچے کی سانسیں آہستہ آہستہ تھمنے لگیں مجھ کو لگا کے بچا اب شاید نارمل ہو رہا ہے مگر ایسا کچھ نہیں ہوا پتہ نہیں کب کی کب میں اس بچے کی سانسیں پوری طرح تھم چکی تھی اور بچے کا جسم بلکل سکوں کی حالت میں آچکا تھا، اس بچے کے باپ نے جب بچے کو زور زور سے آوازیں دینا شروع کاری اور چیخنے لگا تو اسی وقت اندازہ ہوا کہ اب یہ بچہ ہمارے درمیان نہیں رہا. میری حالت کا کیا لکھوں ٹینٹ کے باہر موجود کارکن اندر آئے اور بچے کی طرف دیکھا میری حالت بھی سہی آہی تھی، ایک بچہ ہماری پوری کوشش کے باوجود ہم کو چھوڑ کر جا چکا تھا. ہم سب کی آنکھوں میں آنسو تھے، بچے کا باپ مقامی زبان میں چیخ چیخ کر الله سے فریاد کر رہا تھا. میں اب بھی کسی معجزے کی امید کر رہا تھا، (یہ بھی بھول گیا تھا کے معجزے تو الله کے بہت خاص بندوں کے لئے ہوتے ہیں، ہم تو بہت گنہگار لوگ ہیں. ہماری دعا بھی جانے قبولیت کی کس منزل پر جا کر روک جاتی ہوگی).


اس بچے کا نام گلریز خان تھا، والد نہ نام اباسین خان.  اس بچے کو  پچھلے ٣ہفتوں سے بخار کی شکایات تھی جو کم ہونے کے بجائے بڑھتی چلی گئی، جس گاؤں سی یہ لوگ آئے تھے وہاں ڈاکٹر تو کیا کوئی ڈسپنسری بھی موجود نہیں. دتہ کھل میں صرف ایک اسپتال ہے وہ بھی نام کا جہاں ہمارے پاس موجود ادویات سی بھی کم ادویات ہوتی ہیں. یہ لوگ ہمارے میڈیکل کیمپ کا سن کر اس بچے کو یہاں لائے تھے اس امید پر کے شاید ہم اس بچے کے لئے کچھ کر سکیں گے مگر ایسا کچھ نہیں ہوا یہ بچا ہمارے ہی سامنے دم توڑ گیا اور ہم صرف دیکھتے ہی رہ گئے. عدنان بھائی ٹینٹ سے باہر جا چکے تھے. اکرم بھائی نہیں ہم سب کو ہمت دلائی، بچے کے گھر والوں سے مقامی زبان میں بات کر کے اس بچے کو واپس لے جانے کا انتظام کرنے چلے گئے. بچے کے ساتھ آئے ہوے ایک اور صاحب نے بچے کے پیروں کو اپس میں جوڑ کر انگھوٹوں میں گرہ لگی سر اور منہ کے درمیان پٹی باندھی اور بچے کے اپر ایک چادر ڈال دی، میں تھوڑا سمبھلا تو دوسرے بچے کی فکر ہوئی اس بچے کی حالت بھی کچھ مختلف نہیں تھی، میں نے لڑنے والے انداز میں دوسرے بچے (اسد) کے گھر والوں کو سمجھانا چاہا کے خدا کے لئے اس بچے کو مرنے سے بچا لو، ہم لوگ بہت کمزور ہیں، ہمارے پاس اتنی ادویات اور انتظام نہیں کے اس بچے کا سہی علاج کر سکیں، آپ لوگ اس بچے کو ابھی میران شاہ لے جو شاید وہاں اس بچے کا سہی علاج ہو سکے، بچے کے ساتھ موجود اس کے بھائی اور والد نے رقم نہ ہونے کا کہا میں نے بلال کو عدنان  بھائی کو اندر بولنے کے لئے کہا، وہ عدنان بھائی کو بلا لایا تو میں نہیں ان کو سری صورت حال سے آگاہ کیا. جواب میں انہوں نے کہا کے ہم کچھ انتظام کرنے کی کوشش کرتے ہیں. میرے پاس اپنے ١٥٠٠ (پندرہ سو روپے) تھے وہ میں نے عدنان بھائی کو دے عدنان بھی نی باہر جا کر باقی ساتھیوں کے سامنے ساری بات رکھی اور قریب ٣٠٠٠ (تین ہزار روپے) جمع کر کے دوسرے بچے (اسد) کے والد کو دیے. اتنی دیرمیں اکرم بھائی بھی واپس آگئے تھے، انتقال کے ہوے بچے کو واپس اس کے گاؤں منتقل کرنے کے لئے ایک خچر گاڑی کا انتظام ہو چکا تھا. ہلکی بارش کی وہا سے راستے خراب تھے اسی لئے کوئی اور گاڑی شاید وہاں نہیں جا سکتی تھی، میں نی خود آج صبح یہاں صرف کچھ موٹر بائیک ہی دیکھی تھی یا ایک ڈاٹسن جیپ اس کے علاوہ مجھ کو کہی کوئی دوسری گاڑی نظر نہیں آئی. بچے (گلریز)  کے والد نے اپنی تنگدستی کے بارے میں بتایا ان کے پاس بھی کفن دفن کے لئے کوئی انتظام نہیں تھا. ٹیم آشیانہ کے پاس ہر وقت ٨-١٠ کفن موجود ہوتے ہیں (عدنان بھی کے مطابق، ہم کو اپنے کفن کا کپڑا ایسے حالت میں ہر وقت اپنے ساتھ رکھنا چاہیے)، ایک اور ساتھی نے عدنان بھائی کے کہنے پر ان کے والد کو کفن کا کپڑا دیا اور ساتھ کچھ رقم (شاید ١٠٠٠ روپے) دی. بچے کے والد اور گھر والے کافی سمبھل چکے تھے اور سورج غروب ہونے سے پہلے اپنے گھر (گاؤں) پہنچ جانا چاہتے تھے، بچے کو لے جانے کی  تیاری کری. دوسرے بچے کو ایک اور خچر گاڑی سے میران شاہ منتقل کرنے کا انتظام ہو چکا تھا. ایک مقامی ساتھی بچے کی دیکھ بھال کی غرض سی ان کے ساتھ رہا تھا. پہلے انتقال ہوے بچے (گلریز) کو رخصت کرنے کی تیاری ہوئی. میں جو بہت دیر سے بہت ضبط، صبر اور تحمل کا مظاہرہ کر رہا تھا اب برداشت نہ کر سکا، (میں نے اس بچے پر بہت  محنت کری تھی،  مگر مری اور ہم سب کی کوئی بھی کوشش کامیاب نہیں ہوئی، کاش کے ہم اس بچے کے والد کو کل ہی سمجھا سکتے اور ان کے جانے کا انتظام کر سکتے) مگر کوئی کیا کر سکتا ہے ہم ان لوگوں سے لڑ نہیں سکتے، یہ لوگ بھی جب پانی سر سی گزر جاتا ہے  کچھ سمجھتے ہیں. ہم سب ایک دوسرے کے گلے لگ کر بہت روے مقامی لوگ بھی ہمارے ساتھ آ گئے ہم کو حوصلہ دیا اور  سمجھایا کے اسی میں الله کی رضا تھی. (کاش کے ہم الله کی رضا کو سمجھ سکیں) 
یہ لوگ گلریز کو لے کررخصت ہوے،  عدنان بھائی جو بہت ہمت اور صبر والے ہیں نے بھی ضبط کے سارے بندھن توڑ دیے. اور ایک طرف جا کر بیٹھ گئے، میں ان کی طرف جانا چاہتا تھا مگر مجھ کو دوسرے ساتھیوں نے روک دیا. سب نے یہی کہا کے اس وقت عدنان بھائی کو اکیلا ہی رہنے دو.  (شاید یہ ہدایت خود عدنان بھی نے دی ہوں). دوسرے بچے اسد کو میران شاہ لے جایا جا چکا ہے، الہ پاک اس بچے کو صحت دے اور میران شاہ میں موجود طبی سہولیات سے اس بچے کا علاج ممکن ہو سکے - آمین.


میں آج اس سے زیادہ اور کچھ نہیں لکھ سکتا. مایوسی حرام ہے، مجبوری کا رونا کمزور لوگ روتے ہیں تو ایسے میں میں خود کو اور ٹیم آشیانہ کو کیا سمجھوں؟ خود کو کیسے  دوں؟ یہی پاکستان ہے جہاں ایک طرف علاج کی بہترین سہولیات سے آراستہ اسپتال ہیں جہاں اس ملک کے امرا اور سرکاری لوگ علاج کرتے ہیں، یہی پاکستان ہے جہاں سڑکوں پر لوگ مر جاتے ہیں اور کوئی پوچھنے والا نہیں، اور یہی پاکستان ہے جہاں دتہ خیل میں خسرہ کی بیماری میں مبتلا ایک بچہ صرف اس لئے مر جاتا ہے کے اس پورے علاقے میں ڈاکٹر تک موجود نہیں. (اس سے زیادہ میں اور کچھ نہیں سوچنا چاہتا نہ ہی لکھنا چاہتا ہوں)


=============================================
امی کے نام:
پیاری امی جان، اسلام و علیکم و قدم بوسی!
آپ کو ایک خط لکھا ہے جانے وہ خط کب آپ کو ملے، جس جگہ میں موجود ہوں یہاں کسی بھی قسم کا رابطہ کرنا ممکن نہیں، یہاں بجلی تک نہیں تو موبائل فون یا کسی اور چیز کا انتظام نہیں. اور ہم لوگ (ٹیم آشیانہ) خود کے لئے دو وقت کے کھانے کا انتظام نہیں کر سکتے توکسی اور چیز کا انتظام کس طرح ممکن ہے؟ 
آج آپ کے بیٹے کے سامنے جو خود کو ایک جذباتی اور بہت اچھا فلاحی کارکن سمجھتا ہے، ایک بچہ اپنی جان سے گیا، مجھ کو اچھی طرح یاد ہے جب بھی کراچی میں خسرہ کی وبا کا امکان ہوتا ہے آپ ہم سب کو اور گھر کے بچوں کے لئے کس طرح گھریلو ٹوٹکوں اور ادویات کا انتظام کرتی ہیں. یہاں رابطہ نہ ہونے کے سبب میں آپ سی کچھ بھی نہ پوچھ سکا. بس جو کچھ یہاں کے لوگوں کے ساتھ مل کر کر سکتا تھا کیا. آپ کسی بھی طرح فریال باجی سے رابطہ کر کے ان کو کچھ احتیاطی تدابیر بتائیں. یہاں خسرہ بہت تیزی سے پھل رہا ہے. 
امی جان، میں یہاں خود کو سبب کے ہوتے ہوے بھی بہت کمزور، تنہا اور بے بس سمجھ رہا ہوں، سچ کہوں تو میں واپس آنا چاہتا ہوں، مگر پھر سوچتا ہوں کہ واپس تو آنا ہی ہے. تو کیوں نہ کچھ اور وقت یہاں کے لوگوں کے لئے کچھ کم کر کے ہی آؤں. میرے لئے بہت بہت بہت دعا کریں، میں کمزور نہیں ہونا چاہتا، آپ کا بتا ہوں اور آپ کی سکھائی ہوئی ایک ایک بات پر عمل کرتا ہوں. نماز پڑھتا ہوں دل سی الله سی فریاد کرتا ہوں. ہر وقت یہی امید کرتا ہوں کے الله پاک غیب سی ہماری مدد کرے گا مگر ابھی تک کوئی مدد نہیں ملی. مگر امید کم نہیں ہونے دیتا. یہاں کے حالت کا علم آپ کو میری ڈائری پڑھ کر ہو رہا ہوگا. آپ ہم سب کی ہمت کے لئے اور مدد کے لئے دعا کریں، باقی حالات کا علم آپ کو میرے خط ملنے پر ہو جاۓ گا. 
آپ کی بہت یاد آتی ہے. آپ کا خط میری جیب میں ہی پڑھا رہتا ہے. ساتھ ہی ان بچوں کے لئے بھی دعا کریں جو یہاں بری حالت میں ہیں. یہاں کے لوگنو کے لئے بھی دعا کریں کے الله پاک ان سب کو مشکلات سی نکالے. 
انشا الله بہت جلد ملاقات ہوگی.
آپ کا بیٹا.
دعاؤں اور مغفرت کا محتاج                                             
 

Thursday, July 19, 2012

دتہ خیل میں اسکول کا پہلا دن اور ٹیم آشیانہ کے میڈیکل کیمپ کی داستان

اسلام و علیکم 
محترم دوستوں اور ساتھیوں آج صبح ہمارا رابطہ ٹیم آشیانہ سے ممکن ہو سکا ہے، ٹیم کے کارکن کی ڈائری کے کافی صفحات ایک ساتھ موصول ہوے ہیں جن کو ضروری تدوین اور ایڈیٹنگ کے بعد یہاں لکھا جا رہا ہے. یاد رکھیں کہ یہ ڈائری ١-٢ دن پرانی ہے.
========================================================================

اسلام و علیکم،
سب سے پہلے کچھ اپنے بارے میں لکھتا ہوں، گوشتہ شب جب ہم لوگ یہاں (دتہ خیل) کے بزرگوں سے مل کر اور اپنا چھوٹا سا اسکول چلانے کے اجازت لے کر آئے ہیں، میرے دل میں ایک عجیب سی بیچینی ہو رہی ہے. کچھ ہے جو  نہیں آرہا ہے. میں نی کراچی سے آیا ہوا اپنی امی کا خط بھی نہیں پڑھا کہ جانے اس میں کیا حالات لکھ ہونگیں. امی کو یہاں کے حالات کا کچھ علم نہیں ہے. بہت پریشان ہونگی. میں پہلے آج کے دن ہوے سارے معملات کو ایک دفع پھر سے سوچنا چہ رہا تھا اور نہیں چاہتا تھا کے کوئی ذاتی خیال میرے دل اور دماغ پر حاوی ہو.
میں نے پہلے امی کا خط پڑھنے کے لئے کھولا، خط کیا ہے ایک کتاب ہے. میری خیریت، اور اپنی خیریت، کراچی کے حالات، بہنوں کے خیریت، دوستوں اور احباب کی میرے بارے میں فکر، اور بہت سری نصیحتیں. میرے کھانے پینے کے بارے میں احتیاط، کچھ کراچی کا احوال اور بہت کچھ، اکھڑ میں امی کا بہت سارا پیار. آنکھوں میں آنسو آگئے. اور خیال آیا کے کتنا خوش نصیب ہوں کے میری ماں ہے. اور خیال آیا یہاں بہت سارے لوگ ایسے بھی ہیں جن کے پاس ماں نہیں ہے. میں نے بستر پر لیٹے لیٹے اپنی آنکھیں بند کریں اور امی سے باتیں کرتا چلا گیا. کب آنکہ لگی پتہ نہیں. 

صبح فجر کی نماز پر ایک ساتھی کارکن نے جگایا، جاگا تو احساس ہوا کے میں گھر پر نہیں ہوں بلکے گھر سے بہت دور شمالی وزیرستان میں موجود ہوں. جلدی جلدی اٹھ کر نماز کی تیاری کری. نماز ادا کرتے ہی ہم سب کو ہماری آج کی ذمہداریوں سے آگاہ کیا گیا. (گزشتہ شب جو سامان ہمارے ساتھیوں نی ہم کو یہاں بھیجا تھا اس کو دیکھ لیا گیا تھا اور تمام سامان کی ایک لسٹ بنا کر اگلے کاموں کی تیاری کر لی گئی تھی). میرے پاس پہلے سے ہی اسکول کا کام موجود تھا جس کے لئے مجھ کو آج سے عملی کام کرنا تھا. تو مجھ کو اور میرے ساتھ بلال اور ایک دوسرے کارکن کو روک دیا گیا. باقی کارکنان ایک میڈیکل کیمپ   لگانے کی تیاری میں لگ گئے. امدادی سامان بہت کم مقدار میں تھا اسی لئے میڈیکل کیمپ یہیں (آشیانہ کیمپ، دتہ خیل) لگانے  کا فیصلہ کیا گیا تھا. نماز فجر کے وقت تمام قریبی مساجد اور جگہوں پر بتا دیا گیا تھا کے آج یہاں ایک فری میڈیکل کیمپ لگایا جا رہا ہے. (شمالی وزیرستان) کے لوگ نماز فجر کے وقت جاگ جاتے ہیں اور نماز کے بعد جس کے جو کام ہوتے ہیں وہ نمٹاتے ہیں، بڑے شہروں کی طرح یہاں دیر تک جاگنے اور کام شروع کرنے کا رواج نہیں ہے). ابھی میڈیکل کیمپ پوری طرح ترتیب بھی نہیں دیا گیا تھا کہ مقامی افراد کی آمد شروع ہو گئی. میں میڈیکل کیمپ سے قریب ہی بیٹھا کچھ کاغذات ترتیب دے رہا تھا اور بلال کو سمجھا رہا تھا کے اپنے دوستوں اور دوسرے بچوں کو کس طرح سمجھا کر یہاں لانا ہے. یہ کام اتنا آسان نہیں تھا. گزشتہ شب ہوئی ملاقات کے بعد میرے لئے اور مشکلات کھڑی ہو چکی تھی جن سے بہت احتیاط اور تحمل کے ساتھ نکلنا تھا. 

آشیانہ اسکول کا پہلا دن:
ٹیم آشیانہ کا میڈیکل کیمپ:
مکمل وزیرستان ڈائری پڑھنے کے لئے یہاں کلاک کریں:
Click here to read full WAziristan Dairy from a Volunteer of Team Ashiyana "North Waziristan"
جزاک الله 
آپ کی دعاؤں  کے محتاج
ٹیم آشیانہ برائے شمالی وزیرستان.

Wednesday, July 18, 2012

Team Ashiyana: Volunteer required for North Waziristan.

Dear Friends, Family Member's & Readers,
اسلام و علیکم 

Team Ashiyana, is working for the Victims of War on Terror in North Waziristan since last years. A brief details of Team Ashiyana can be find in earlier posts of this blog. 

Team Ashiyana is looking for Young, Energetic, Devoted & Patriotic personal's to work as Volunteer with us in North Waziristan.

 Who can join us as Volunteer?
  • Above of age 18 and have N.N.I.C (Nadra National Identity Card).
  • Both Male and Females.
  • Doctors, Teachers, Paramedics (Nurses),  Social Workers, Students etc.
  • Ready to live in hard and tough time in the remote areas of North Waziristan.
  • Must be Muslim and Pakistani.
  • Proficiency in Urdu, Pashto, Farsi, (Both speak and written).
  • Able to mix with the local as friend, and work for the children and orphans at Ashiyana Camp, Datta Khel, North Waziristan.
  • Each volunteer can stay for two week in the month of Ramadan with us. 

Things need to be remember:
  • We are not a register organization. We are working as a group of "Friends of Adnan - Syed Adnan Ali Naqvi." (details can be find at (http://news.bbc.co.uk/2/hi/south_asia/4420388.stm) or earlier social work of Adnan and friends at (http://pakistaniadnan.blogspot.com).
  • The only thing to work with us is to work with the true spirit of Islam and for the sack of Humanity in this region.
  • We are not offering any kind of the media coverage or promotion. (Any kind of the media reporting is strictly prohibitive).

Dear all, if anyone feel like to fit as per above mentioned criteria so feel free to contact with us to join Team Ashiyana here at North Waziristan. We will give you an opportunity to work for the Country, for the Nation, For the poor, sick, suffered, for the Orphans, Widows and many more. As well as it is a chance to make conversation with the local (Waziri's). This interaction will help us and these peoples to understand each others and to make a friendly and peaceful society in all over the Pakistan (Insha ALLAH).
  
Interested person can contact us by email us:
team.ashiyana@gmail.com
s_adnan_ali_naqvi@yahoo.ca
faryal.zehra@gmail.com (Only for female volunteer)
mansoorahmed.aaj@gmail.com (For Teachers and professionals) 

or hit us with SMS (+92 345 297 1618)

The people of North Waziristan and Team Ashiyana is waiting for you to work with a challenging mode.  

Jazak ALLAH kher
Team Ashiyana
Datta Khel, North Waziristan.

محترم دوستوں، ساتھیوں اور پڑھنے والے دوست.
اسلام و علیکم،

ٹیم آشیانہ جوپچھلے کچھ برسوں سے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں متاثر لوگوں اور اس جنگ میں ہوے یتیم، بیواؤں، بےگھر، اور دیگر متاثرین کے لئے مختلف فلاحی کام  اپنی مدد آپ کے تحت سر انجام دے رہی ہے. 
ٹیم آشیانہ جو پہلے فرینڈز آف عدنان کے نام سے کام کرتی رہی ہے کی تفصیلات آپ کو اسی بلاگ  کی ابتدائی پوسٹ میں مل سکتی ہیں. 
عدنان کون ہیں؟ کے بارے میں آپ کو اس لنک سے مدد مل سکتی ہے  
  • http://news.bbc.co.uk/2/hi/south_asia/4420388.stm

فرینڈز آف عدنان کے ابتدائی فلاحی کاموں کے بارے میں معلومات حاصل کرنے کے لئے آپ اس لنک سے مدد لے سکتے ہیں 
  • http://pakistaniadnan.blogspot.com
ٹیم آشیانہ، شمالی وزیرستان کے ایسے علاقوں میں مفت طبی امداد، بیواؤں اور یتیموں کے گھروں میں مفت راشن کی فراہمی اور یتیم بچوں کے لئے مفت کپڑوں کی تقسیم کے ساتھ ساتھ اسکول اور مسجد کے منصوبوں پر کام کر رہی ہے جہاں ام حالات میں بھی آمدورفت مشکل ہوتی ہے، الله پاک کے فضل اور کرم سے ٹیم آشیانہ الله پاک پر پورا بھروسہ رکھتے ہوتے ہوے اور مقامی دوستوں کی مدد سے ابھی تک اپنے فلاحی کاموں کو جاری رکھے ہوے ہے. 

ٹیم آشیانہ، شمالی وزیرستان ایک دفع پھر اپنے دوستوں، ساتھیوں کو دعوت دیتی ہے کہ آپ ٹیم آشیانہ کا ایک حصہ بنیں، ہمارے (ٹیم آشیانہ کے ساتھ) ساتھ ہمارے فلاحی کاموں میں حصہ لیں. 
ٹیم آشیانہ کو تلاش ہے مخلص، انسان دوست، محب وطن (پاکستانی) والینٹیرز کی جو ٹیم آشیانہ کے ساتھ کچھ وقت یہاں کے لوگوں کے لئے فلاحی کام کریں. 

کون ہم کو جوائن (ہمارے ساتھ شرکت) کر سکتا ہے؟
  • ١٨ (اٹھارہ) برس سے زائد کے نوجوان اور افراد، جو پاکستان کا قومی شاختی کارڈ رکھتے ہوں.
  • مرد اور خواتین.
  • ڈاکٹرز، اساتذہ کرام، نرسز، طلباہ، اور سوشل ورکرز وغیرہ.
  • لازمی پاکستانی اور مسلمان.
  • اردو، پشتو، فارسی،  زبان میں مہارت رکھنے والے ہوں. (یہاں کے بہت کم لوگ اردو زبان کو بول یا سمجھ سکتے ہیں).
  • انسانی خدمات کے جذبے سے سرشار ہوں، (ہرطرح کی مشکلات کا سامنا کرنے کا عزم، ہمت اور حوصلہ رکھتے ہوں، فری طبی امداد کے سلسلے میں ہم کو بہت دفع انتہائی مشکل راستوں سے گزرتے ہوے ایسے علاقوں میں جانا پڑتا ہے جہاں کبھی کبھی، خانے پینے کی اشیا یا عام سہولیات میسر نہیں ہوتی، اس کے لئے تیار ہوں)
  • دوستانہ رویہ رکھتے ہوں، مقامی لوگوں میں گھلنے ملنے کی صلاحیت اور صبر اور برداشت کا جذبہ ہو.
  • متخب ہونے والے ساتھ کو کم از کم ٢ (دو) ہفتے رمضان کریم کے ماہ میں ٹیم آشیانہ کے ساتھ گزرنے ہونگے (یاد رہے کہ میران شاہ، شمالی وزیرستان سے آگے، کسی بھی طرح کا مواصلاتی رابطے کا ہونا یا رکھنا فلحال ٹیم آشیانہ کے لئے ممکن نہیں. نہ ہی ٹیم آشیانہ جدید سہولیات سے آراستہ ہے)

ٹیم آشیانہ کو جوائن (شمولیت) کے وقت یاد رکھنے والی باتیں:
  • ٹیم آشیانہ کوئی رجسٹر ادارہ یا تنظیم نہیں ہے، ٹیم آشیانہ سید عدنان علی نقوی اور دوستوں پر مشتمل ایک فلاحی گروپ ہے جو شمالی وزیرستان کے علاقے میں پریشان حال تباہ حال، یتیم، بیواؤں، معذروں کے لئے مختلف فلاحی کام سر انجام دے رہے ہیں. ان کاموں کے لئے درکار فنڈز زیادہ تر ہم دوست اور احباب آپس میں ہی جمع کرتے ہیں اور کچھ مخلص دوست اور ساتھ ہیں جو ہماری ہمیشہ مدد کرتے رہتے ہیں. الله پاک ہم سب کو اجر عظیم  دے،  آمین)
  • ٹیم آشیانہ اور کارکنان کسی بھی طرح کی میڈیا کوریج کے شدید مخالف ہیں، اور نہ ہی ایسی کسی بھی طرح کے کم کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں. لہذا ہمارے ساتھ کام کرتے ہوے خودنمائی، یا کسی بھی نام یا شہرت کی امید نہ رکھیں. صرف انسانی خدمات کا جذبہ، اور سہی اسلامی تعلیمات کے مطابق یہاں کے لوگوں کے لئے فلاحی کم کرنے ہونگے. ٹیم آشیانہ کے ساتھ کام کرتے وقت آپ کو اپنی رائے کے اظہر کا پورا موقع دیا جاۓ گا اور اگر آپ سمجھتے ہیں کے آپ ٹیم آشیانہ کے ساتھ کام نہیں کر سکتے تو ٹیم آشیانہ نہایت خسدلی کے ساتھ الوداع کے دے گی.

محترم دوستوں اور ساتھیوں، مندرجہ بلا پڑھ کر اگر کوئی ساتھ یا دوست یہ سمجھتا ہے کہ وہ ماہ رمضان میں ہمارے ساتھ یہاں (شمالی وزیرستان) میں ہمارے فلاحی کاموں کا ایک حصہ بن سکتا ہے تو ہم سے رابطہ کریں 
team.ashiyana@gmail.com
faryal.zehra@gmail.com (صرف خواتین کے لئے ) 
s_adnan_ali_naqvi@yahoo.ca
mansoorahmed.aaj@gmail.com (اساتذہ کرام اور دیگر کے لئے)
یا ہم کو پیغام بھیجیں 
+92 345 297 1618

ٹیم آشیانہ اور شمالی وزیرستان میں بسنے والے بہت سارے لوگ آپ کے ساتھ، آپ کی مدد کے منتظر ہیں. یاد رہے کے ابھی تک ٹیم آشیانہ واحد فلاحی گروپ ہے جو شمالی وزرستان میں فلاحی کاموں کو انتہائی کام طور پر انجام دے رہا ہے. ابھی تک پاکستان یا دنیا کی کوئی بھی فلاحی تنظیم یہاں اکر کوئی بھی فلاحی منصوبہ شروع نہیں کر سکی ہے. 

ہم کو آپ کا انتظار رہے گا.
جزاک الله خیر 
ٹیم آشیانہ،
دتہ خیل، شمالی وزیرستان.

Tuesday, July 17, 2012

دتہ خیل، شمالی وزیرستان، مقامی بڑوں سے ملاقات

اسلام و علیکم 

گزشتہ ڈائری میں ذکر کیا تھا کہ میں اور عدنان بھی ایک اور ساتھ کارکن (ٹیم آشیانہ) کے ساتھ دتہ خیل کے بزرگوں اور بڑوں سے یہاں تعلیمی سرگرمیاں شروع کرنے کے لئے اجازت لینے جانے کی تیاری کر رہے ہیں.
ہمارا ادمدی سامان تو آگیا ہے مگر ابھی تک ہم کو تفصیلات کا نہیں پتہ کے سامان میں کیا چیز کتنی مقدار میں ہے، لگتا ہے کے آج کی رات بھی جاگ کر ہی گزارنا ہوگی. ہم عشا کی نماز کے بعد لوگوں سے ملنے کے لئے جانے کی تیاری کر ہی رہے تھے، بلال محسود اپنے گھر چلا گیا تھا. اور باقی ساتھ امدادی سامان کے ساتھ آئے ہوے کارکنان کے ساتھ بات چیت میں مصروف تھے. میں دل اور دماغ کو سمجھا رہا تھا کہ وہاں کیا بات کرنا ہے؟ پتہ نہیں یہ کون لوگ ہونگیں؟ ان کے کیا دماغ ہونگیں؟ اور کیا سوچ ہوگی؟ پھر بھی الله کی ذات پر بھروسہ رکھتے ہوے مجھ کو اپنی بات سمجھنے کی پوری کوشش کرنا تھی پھر ان لوگوں نہیں ہم کو رات میں ہی کیوں بلایا؟ یہ سوال بھی دماغ میں بار بار آرہا تھا. عدنان بھائی، نے کہا کے ہم اب جانے کو تیار ہیں. میں نی دل ہی دل میں آیتہ الکرسی پڑھی. الله سے مدد کی بھیک مانگی اور عدنان بھائی کے ساتھ نکل پڑا، ہمارے ساتھ ٹیم آشیانہ کے مقامی کارکن اکرم بھائی بھی موجود تھے. اکرم بھی کے بارے میں یہی سنا ہے کہ یہی عدنان بھائی کو یہاں (شمالی وزیرستان) لے کرآئے تھے. اور جب سے عدنان بھائی یہاں فلاحی کام کر رہے ہیں اکرم بھائی ٹیم آشیانہ کے ساتھ ہیں اور ہر اچھے برے وقت میں ٹیم کا اور کارکنان کا ساتھ دیتے ہیں. میرے پہلے وزٹ کے دوران اکرم بھائی نے ہی میرے دل سے ڈرون جہازوں کا ڈر اور خوف دور کیا تھا. اکرم بھی مقامی زبان کے علاوہ فارسی، ہندکو، اردو اور پنجابی زبان جانتے ہیں. اور میں نے ان کو تھوڑا بہت انگریزی زبان بھی سکھا  دی ہے.  ہم کہاں جا رہے تھے اس کا پتہ صرف اکرم بھائی کو ہی تھا. اس علاقے کے بڑے اور جرگے کے ممبر ہیں. اردو زبان سمجھتے ہیں اور بہت نیک صفت انسان ہیں. 
میں اب آگے کیا لکھوں؟ مجھ کو اجازت نہیں ہے کے میں وہ باتیں بھی لکھوں جو لکھنی چاہیے تاکہ لوگ کچھ تو سمجھیں میں کچھ تو سمجھوں، مگر ووہی سیکورٹی رسک کا بہانہ اس بات پر میری عدنان بھائی سے بہت بار بحث ہوئی ہے کے ہم جو کر رہے ہیں اور جو دیکھ رہے ہیں ووہی لکھ دینا چاہیے مگر عدنان بھائی ہمیشہ مجھ کو کبھی نرمی اور کبھی سختی سے روک دیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ "وقت آنے پر سب سمجھ جاؤ گے،" اب پتہ نہیں وہ وقت کب آئے گا. 
خیر! شام سے ہوئی بارش کی وجہہ سے راستے میں پھسلن زیادہ تھی. ہم ایک مقامی مسجد کی طرف گئے تو وہاں ہم سے پہلے دو  (٢) قبائلی موجود تھے. یہاں بجلی یا روشنی کا کوئی انتظام نہیں ہے. میرے خیال سے بجلی صرف میران شاہ تک ہی موجود ہے اور اگر آگے ہے بھی تو نہیں ہوتی. اندھیرے میں سہی طریقے سے چہرے نہیں دیکھ سکا. سلام بہت گرم جوشی سے ہوا اکرم بھی نی اپنی زبان میں ان کو ہمارے بارے میں بتایا اور ہم لوگ ان کے پہچے پیچھے چل پڑے. عدنان بھی سارا راستہ کچھ نہیں بولے میں بھی صرف یہی کہ سکا کی "اور کتنا چلنا ہوگا؟" ہم مقامی مسجد سے یہی کوئی ١٠ منٹ تک پیدل چلتے رہے ہونگے تو آگے دو (٢) لوگ اور ملے یہ ہتھیار بند لوگ تھے یہ میرے لئے سہی نہیں تھا، ہم لوگ کوئی جنگ کرنے یا کسی کو قتل کرنے کے مقصد سے نہیں جا رہے تھے تو ان لوگوں سے ملوانے کا کیا مطلب. میں کچھ کہنے ہی والا تھا کے عدنان بھائی نے میرا ہاتھ دبا کر مجھ کو روک دیا، ہم ان لوگوں سے سلام دوا کر کے آگے بڑھ،. مزید ١٠-١٥ منٹ تک پیدل چلنا پر پھر کچھ روشنی نظر آئی. یہ جگہ دتہ خیل کے مقام سے تھوڑا آگے ہے. سب سے الگ تھلگ کچھ مکان جو شاید ام نظروں سے نظر بھی نہ آے. کچھ لوگ ادھر ادھر بیٹھے تھے، حلیہ تو قبائلی تھا مگر . . .  خیر ہم کو ایک جھونپڑی نما حجرے میں لے جایا گیا جہاں کوئی نہیں تھا، میں اکرم بھائی اور عدنان بھائی نیچے بچی کہتی پر بیٹھ گئے. میرا تھکن کے مارے براحال تھا  اوپر سے سے یہ لوگ ہم سے اس طرح ملاقات کر رہے تھے جیسے ہم کوئی حکومتی نمائندے ہوں یا ان کے لئے کوئی بہت بڑا خطرہ ہوں. مجھ کو پورا یقین ہے کے یہ لوگ ہمارے بارے میں سب کچھ جانتے ہیں. دتہ خیل کوئی بہت بڑا علاقہ نہیں ہے جہاں کسی کے بارے میں جاننا مشکل ہو، اسی لئے مجھ کو پورا یقین تھا کہ یہ لوگ ٹیم آشیانہ، عدنان بھائی، کارکنان کے بارے میں سب کچھ جانتے ہونگے. پھر اتنی احتیاط کیوں؟
کچھ ہی دیر میں ایک (١) خوفناک شکل اور لمبا چوڑا انسان (انتہائی مکروہ شکل - الله معاف کرے) اندر آیا اور ہم کو سلام کیا ہم کو کھڑا ہونے کا کہا اور ہماری بہت بدتمیزی کے ساتھ تلاشی لی، اکرم بھائی نے دبے لفظوں میں احتجاج بھی کیا مگر وہ بعد تمیز انسان نہیں مانا. تلاشی کے بعد میرے پاس موجود کاپی اور پین لیتے ہووے مقامی زبان میں کچھ کہا جس پر اکرم بھائی نے اس سے بحث کرنا شروع کردی بات تلخ کلامی تک پہنچی تو عدنان بھائی نی مداخلت کری اور اردو میں کہا "اکرم بھائی، یہ کاپی اور پین ہے، لے لینے دو علم کی چیز ہے کسی نقصان کی نہیں. شاید ان کے کچھ کام آسکے." اکرم بھائی ایک دم چپ اور خاموش ہو گئے. (عدنان بھائی نے اپنی محنت اور اخلاص سے یہاں کے لوگوں میں بہت عزت بنا لی تھی اور آج اس کا عملی مظاہرہ بھی دیکھ لیا). یہ بات میرے لئے انتباہ بھی تھی، اور ہوشیار رہنے کے لئے کہی گئی تھی.
تھکن بہت تھی میں نے خود ہی چائے نکال کر سب کو دی. خود بھی پی. تھودا فرحت کا احساس ہوا اور اب  لگ پڑی.   وہ بچہ جو چائے لایا تھا وہی ایک طرف کھڑاہوا تھا. پھرباہر کچھ شور ہوا، وہی مکروہ  شکل انسان (الله معاف کرے) اندر آیا اس دفع اس کے بات کرنے کا انداز الگ تھا، اکرم بھائی سے مقامی زبان میں کچھ کہا اور اکرم بھائی نے ہم کو چلنے کے لئے کہا. ہم اٹھ کھڑے ہوے میں دل ہی دل میں دوا کر رہا تھا کے بس میں جذباتی نہ ہوں اور میرے منہ سے کوئی ایسی بات نہ نکلے جس سے ہم میں سے کسی کو پریشانی ہو، (میں کسی بھی صورت میں ان لوگوں سے الجھنا نہیں چاہتا تھا). 
ہم ایک اور بارے حجرے میں لے جائے گئے یہاں کہتی پر نرم بستر لگے ہوے تھے. ہم آرام سے بیٹھ گئے میں خود کو پرسکوں رکھنے اور پیش کرنے کی کوشش کر رہا تھا. تھوڑا ہی دیر میں اس حجرے نما کمرے میں ایک ستہ ٦-٧ افراد داخل ہونا شروع ہوے. حلیے سے قبائلی کچھ بڑی عمر  کے لوگ تھے اور ٢ کی عمر ٢٠-٢٢ برس کی ہوگی. حلیے سے پڑھے لکھ اور با ادب لگ رہے تھے، ہم بھی اپنی جگہ سے کھڑے ہوے. نہایت ادب سے سلام کیا اور انہوں نے ہم کو گلے لگایا اور خوش آمدید کہا. سب سے پہلے ایک لڑکے نے جو ان کے ساتھ آیا تھا ہم سے اردو میں بات کرنا شروع کاری اور ہم کو ہوئی تکلیف پر معزرت کری (میں نی دل ہی دل میں کہا، پہلے  دہراتے ہو،تکلیف دیتے ہو پھر معزرت طالب  کرتے ہو،یہ منافقت نہیں تو اور کیا ہے؟) عدنان بھائی نے کہا "کوئی بات نہیں یہاں کے حالات کے مطابق آپ نے جو کیا وہی مناسب ہوگا"    
عدنان بھائی بھی کبھی کبھی ایسی بات کر جاتے ہیں جس کو سمجھنا کم از کم میرے بس کی بات نہیں. پھر اس لڑکے نے اپنے بارے میں بتایا وہ لڑکا اسلام آباد ا ایک تلمی ادارے سے ١٤ کلاس پڑھ کر آیا تھا اور انگریزی بھی اچھی خاصی بول رہا تھا، مجھ کو ہرات ہوئی کے یہ لڑکا ان لوگوں کے ساتھ کیا کر رہا ہے. کاش کے میرے کو یہاں تصاویر کھنچنے کی اجازت ہوتی، کش کے مجھ کو یہاں کے حالات سہی سہی لکھنے کی اجازت ہوتی. (افسوس ہی افسوس). مجھ کو تو کچھ پوچھنے کی بھی اجازت نہیں تھی، ہم تو یہاں اپنی بات کرنے آے تھے، ان سے کیا پوچھتے؟
اکرم بھائی نے مقامی زبان میں کچھ کہا اور عدنان بھائی اور میری طرف اشارہ کر کہ کچھ کہا. پھر عدنان بھائی سے کہا کے آپ اپنے یہاں آنے کا مقصد بیان کریں. عدنان بھائی نے میری طرف اشارہ کیا اور اردو میں ہی بات شروع کری،
محترم بھائیوں، (میں نی کہا لو جی عدنان بھائی کی تقریر شروع)، مگر ایسا ہوا نہیں، ہم یہاں پچھلے کچھ برسوں سے فلاحی کام سر انجام دے رہے ہیں جن کی تفصیلات کے بارے میں آپ لوگ اور شمالی وزیرستان کے کچھ لوگ باخبر ہیں، میرے یہ دوست (میری طرف اشارہ کر کے کہا) کراچی سے تشریف لائے ہیں اور یہاں (دتہ خیل) کے بچوں میں تعلیم کی روشنی پھیلانا چاہتے ہیں. جس کے لئے آپ کی اجازت اور رہنمائی کی ضرورت ہے (میں نی ایک دفع پھر دل میں سوچا، کے ان سے کسی رہنمائی کی امید؟ ان کو تو خود ہی رہنمائی کی ضرورت ہے) اور زیر لب مسکرا دیا. (شاید میری مسکراہٹ کو کسی نے محسوس کیا ہو)، باقی بات میرے یہ دوست خود بیان کریں گے. پھر میری طرف اشارہ کر کے مجھ کو اپنی بات مکمل کرنے کے لئے کہا گیا (ایک اچھی بات یہ تھی کے ہماری بات چیت کے دوران کوئی بھی مداخلت نہیں کر رہا تھا، اس کے پیچھے کیا راز تھا یہ الله ہی جانے) میں نے عدنان بھائی کے انداز بیان کو اپناتے ہوے ایک دفع پھر سب کو سلام کیا، جس کا جواب سب نے با آواز بلند دیا، پھر میں نی کہا، "جیسا کے آپ سب ٹیم آشیانہ اور کارکنان کی محنت کے بارے میں جانتے ہی ہیں، میں یہاں صرف اتنا کہنے آیا ہوں کے ہم کو یہاں کے بچوں کے لئے ایک مدرسہ / اسکول کھولنے کی اجازت دیں جہاں ہم مقامی بچوں کو جدید علوم کے بارے میں آگاہی دے سکیں، میں یہ نہیں کہتا کے اسلامی تعلیمات چھوڑ دیں، مگر اسلامی تعلیمات کے ساتھ ساتھ دنیاوی علوم کے بارے میں آگاہی ہونا بہت ضروری ہے. اور . . . . ایک بڑی عمر کے قبائلی نے مجھ کو اشارہ کر کے روک دیا. مجبورن مجھ کو چپ ہونا پڑا  (بعد میں پتا لگا کے یہ صاحب  یہاں کے جرگے کے رکن ہیں) انہوں نی سب سے کچھ باتیں کرنا شروع کریں یہ بات چیت مقامی زبان میں ہو رہی تھی. درمیان میں وہ عدنان بھائی اور میری طرف اشارہ کر کہ   کچھ کہتے اور اکرم بھی سے مقامی زبان میں کچھ پوچھتے جس کا جواب اکرم بھائی نہایت سکوں سے دیتے. (صبح کے وقت عدنان بھائی نے جس طرح کے شک اور شبے کا اظہار بلال محسود کے لئے کیا تھا پتا نہیں کیوں مجھ کوایسی ہی سوچ اکرم بھائی کے لئے آرہی تھی) میں نی لاہولولہ پڑھا. اور زمین کی طرف دیکھنے لگا. جب ان لوگوں کی بحث رکی تو عدنان بھائی سے کہا گیا کہ ہم لوگ تھوڑا انتظار کریں ایک اور صاحب آرہے ہیں ووہی کوئی فیصلہ کریں گے. اب کون آرہا ہے؟ یہی میں سوچنے لگا. (قسم سے، دل ہی دل میں خود کو کوس رہا تھا، کہ کس مصیبت میں پڑھ گیا ہوں، اچھا خاصا کراچی میں تھا، نوکری کر رہا تھا، شام میں دوستوں کے ساتھ اٹھنا بیٹھنا، زندگی کتنی سکوں سے گزر رہی تھی، یہاں آگیا ہوں جہاں مر بھی گیا تو کسی کو پتہ نہیں لگنے والا کے ہمارے ساتھ ہوا کیا ہے) پھر اچانک دوسرے ساتھیوں کا خیال آیا کہ عدنان بھائی بھی تو کراچی والے ہیں، فریال باجی تو کینیڈا سے آتی ہیں، فیصل بھائی لاہور سے، ڈاکٹر نگہت پشاور سے اور بھی ساتھی، دوست دوسرے شہروں سے آتے ہیں ظاہر ہے زندگی صرف خود کے لئے جینے کا نام نہیں ہے، الله پاک مجھ کو نیک ہدایت دے میں یہ کیا الٹا سیدھا سوچ رہا ہوں. ہم کو انتظار کرنے کا کہا گیا اور ساتھ ہی کچھ لانے کا بھی کہا گیا، وقت کا پتا نہیں تھا ہمارے پاس گھڑیاں نہیں تھی اکرم بھی سے سرگوشی کر کے کہا کہ بھی بہت تھک گیا ہوں، یہ لوگ چاہ کیا رہے ہیں؟ ایسا لگ رہا ہے کے جیسے ہم کسی مذاکرات کی میز پر بیٹھے ہیں. خدا نہ کرے، اگر ڈرون آگئی تو سب کے سب مارے جائیں گے اور پتا نہیں ہم کو کس نام سے  جاۓ؟ اکرم بھائی مسکرا دیے، ساتھ ہی عدنان بھائی بھی مسکرا دیے. تھوڑا دیر میں ایک لڑکا کچھ کھانے پینے کا سامان لے آیا. خوشبو سے لگ رہا تھا کے تازہ تازہ پکایا گیا ہے، بہت بھوک لگنے کے باوجود بھی میں نے کھانے سے انکار کر دیا مجھ کو کہا گیا کے تھوڑا چک لوں مگر میں نے  منع  کر دیا، میرے لہجے میں سختی بھی تھی اب اس وقت یہ تو نہیں کہ سکتا تھا کے میرا روزہ ہے مگر میں یہ کھانا کسی صورت نہیں کھانا چاہتا تھا کیوں کے آج میری فرمائش پر آشیانہ کیمپ میں آلو کا سالن بنا ہے اور مجھ کو پورا یقین ہے کے ہمارے ساتھ ہماری آمد تک کچھ نہیں خانے والے تو میں یہاں بیٹھ کر یہ گوشت، مرغ مسلم کیسے نوش کر سکتا تھا. (پتہ نہیں کیوں میں خود کو بہت طاقتور محسوس کرنے لگا) عدنان بھی نے تو کھانا ہی نہیں تھا کیوں کے ان کی طبیت سہی نہیں تھی) اکرم بھی نی مصلحتا ایک دو ٹکرے اٹھا کر چبا لئے. ہم کو بتایا گیا کے رات کے ١١ بجے سے اپر کا وقت ہو گیا ہے. یہ وقت سہی نہیں ہے، میں نی عدنان بھی سے کہا کے ہم کو اب چلنا چاہیے پتہ نہیں ان کے آنے والا کب تک آے گا، ہم کل دن میں  آکر ان لوگوں سے بات کر لیں گے. مگر اکرم بھائی نے کہا کے ہم اس طرح یہاں سے نہیں جا سکتے (میں بھی یہ بات بھول گیا تھا کے یہاں آتے اپنی مرضی سے ہیں اور جاتے ان لوگوں کی مرضی سے ہیں). بیٹھے رہے، چپ اور خاموش، میں سوچ رہا تھا کے کش میں کراچی سے آیے ہووے امی کے خط ہی پڑھ لیتا، یا ساتھ رکھ لیتا یہاں اب کرنے کو تو کچھ ہے نہیں، جب ان کے وہ (؟؟؟) آے گے تب جانے کیا ہوگا. مگر ہم کو زیادہ دیر انتظار نہیں کرنا پڑا. تھوڑا ہی دیر میں سیکورٹی سخت ہونے کا اندازہ ہوا، حجرے کے اندر اور باہر روشنی بہت کم کر دی گئی. حجرے کے اندر ٥ (پانچ) نوجوان جدید اسلحے سے لیس داخل ہوے اور مختلف جگہوں پر ہوشیار ہو کر کھڑے ہوے، مجھ کو اکرم بھی کی دبی دبی آواز اور الفاظ سنائی دیے، پخیر  راغلے! یہ پشتو کے الفاظ ہیں اور پڑھنے والے سمجھ سکتے ہیں کے ان الفاظ کے کیا مطلب ہے؟ پھر مبارک سلامت کا ہلکا ہلکا شورسنائی دیا. حجرے کے اندر پہلے وہ لوگ داخل ہوے جن سے ہم پہلے ہی مل چکے تھی پھر ٢ (دو) بندوق بردار ہے ان کے پیچھے ایک نوجوان عمر ٢٨-٣٢ برس کے درمیان ہوگی، سرخ سفید چہرہ، سفید رنگ کے قمیض شلوار پہنا ہوا، آنکھوں میں سرما، سر پر سفید اور کالے رنگ کا عمامہ، پیر میں پشاوری چپل. (بہت جاندار شخصیت تھی) حجرے میں داخل ہوا. ہم سب ایک جھٹکے سے اٹھ کھڑے ہوے. (اس بندے کا کیا نام تھا، یہ مجھ کو ابھی تک نہیں پتہ لگا، مگر اتنا یقین ہے کے یہ بندہ بہت اثر اور رسوق والا ہے) اس نے ہم سب سے بہت گرم جوشی سے ہاتھ ملایا، سلام کا جواب دیا اور ایک طرف بہت پرسکوں ہو کر بیٹھ گیا، رات کے اس وقت جب میں اور میرے ساتھ عدنان بھائی، اکرم بھائی بہت تھکے ہوے تھے یہ انسان ایسا لگ رہا تھا کے جیسے بلکل فریش ہے. ایک مقامی صاحب نے ہم کو بتایا کے ان کے سامنے ہماری پوری بات رکھی گئی ہے اور ابہ آخری فیصلہ انہوں نے ہی کرنا ہے. 
ہماری ان صاحب سے کیا بات ہوئی اس کا سب سے اچھا پہلو یہی ہے کہ ہماری بات کو بہت سکوں سے سنا گیا اور ہم کو کہا گیا کے ہم اپنے  آشیانہ کیمپ میں بچوں کو پڑھنے کے عمل کا آغاز کر سکتے ہیں لیکن اگر ہم کو کسی بھی قسم کی ایسی حرکت یا کام میں ملوث پایا گیا جو مقامی تہذیب، اور یہاں کے اصول، رسم اور رواج کے مطابق نہ ہوے تو ہم کو جرگے کے سامنا کرنا ہوگا اور ہم کو سزا دینے کے بعد  اس علاقے سے باہر نکال  دیا جاۓ گا. بحث کی یا اپنی بات کہنے کی اجازت نہیں تھی. ہم کو اس بات کا بھی پابند کیا گیا کہ ہم صرف لڑکوں کو ہی پڑھائیں گے، کوئی لڑکی ہم سے پڑھنے نہیں آے گی. ہم کسی بھی طرح سے ان لڑکوں کو مقامی تہذیب، رسم اور رواج، اسلام کے منافی تعلیم نہیں دیں گے اور نہ ہی ایسی کتابیں تقسیم کریں گے جس سے یہاں کے لوگوں میں آپس میں سوچوں کا ٹکراؤ ہو. اور ہم کو کسی بھی وقت جرگے والے یا مقامی بڑے لوگ چیک کرنے آسکتے ہیں جس کے لئے ہم کو ان لوگوں سے ہر ممکن رابطہ رکھنا ہوگا اور ان کے ہر سوال کا جواب دینا ہوگا. اور بھی کچھ سخت باتیں کہی گئی. کچھ لوگوں نے ہم کو بیرونی ممالک کا ایجنٹ بولا تو کسی نے ہم کو پاکستانی اداروں کا ایجنٹ. اور بھی بہت کچھ (جو کچھ بھی کہا گیا بہت عزت دے کر کہا گیا) اور ہم کو یہ بھی بتا دیا گیا کے ہمارے ہر ہر کام پر ان لوگوں کی نظر ہے. اکھڑ میں اس آدمی نے ایک دفع پھر (منافقت کا مظاہرہ کرتے ہوے) ہم سے کسی بھی قسم کی ہوئی تکلیف پر معذرت مانگی، اپنے بندوق بردار ساتھیوں سے کچھ (مقامی زبان میں) کہا، اور ہم سے اجازت لی وہ خود تو کھڑا نہیں ہوا اکرم بھائی نی اشارہ کیا کے ہماری ملاقات مکمل ہوئی. (میں اس ملاقات سے مطمئن نہیں ہوں، ہماری بات پوری طرح نہیں سنی گئی، نہ ہی ہم جو چاہتے ہیں وہ سنا گیا، بس اپنے ہی لوگوں کی باتیں سن کر ہم کو پابند کر دیا، یہ  غلط ہے) میں نی ان جذبات کا اظہر انگریزی زبان میں عدنان بھی سے حجرے سے نکلتے وقت کیا تو پہچے سے ایک صاحب کی آواز آئ کہ "اگلی ملاقات میں آپ کے سارے شکوے دور کر دے جائیں گے." (مطلب یہاں کسی نے میری انگریزی میں کہی ہوئی بتا کو سمجھ لیا ہے. ہم بندوق برداروں کے پیچھے پیچھے ٢٥-٣٠ منٹ تک چلتے رہے،  ایک دفع پھر ہلکی بارش شروع ہو چکی تھی. تھکن تو تھی مگر اس ملاقات میں ہوئی تشنگی نے میرا دماغ ہلا کر رکھ دیا تھا. (پتہ نہیں عدنان بھی کس طرح خود کو قابو کرتے ہیں یہی سوچ رہا تھا) ہم لوگ دتہ خیل کی مقامی مسجد تک واپس آے جہاں ہم کو بندوق برداروں نے الوداع  کیا اور یہاں سے ہم اپنی مدد آپ کے تحت اکرم بھائی کی رہنمائی میں آشیانہ کیمپ کی طرف  بڑھنے لگے.

اب جب میں یہ ڈائری لکھ رہا ہوں، تو دل خون کے آنسو رو رہا ہے، میں خود کو ایک بند گلی میں محسوس کر رہا ہوں، یہاں فلاحی کام کرنا بھی بہت مشکل ہے، کوئی ایک بھی ایسا نہیں جو ہماری آس بنے، ہم کو سہارا دے، ہم کو مضبوط کرے، یہاں صرف ان لوگوں کی حکمرانی ہے جن کے پاس طاقت ہے، کمزور لوگ محکوم ہیں اور ان لوگوں کے ہر طرح کے فیصلے قبول کرنے کے پابند ہیں. ایسے میں یہاں کوئی کیسے علم اور تعلیم کی روشنی پھیلا سکتا ہے.  مجھ کو ایک چھوٹا سا اسکول چلانے کے لئے اتنی باتوں کا پابند کر دیا گیا ہے جیسے خدانخواستہ میں یہاں کوئی عیسائی تبلیغی مشن چرو کرنے والا ہوں، یا یہاں کے رواج کے مخالف میں کوئی مہم شروع کرنے والا ہوں. میں تو صرف یہاں کے بچوں کے لئے سوچ رہا ہوں، کے آخرکب تک یہ بچے ایسے ہی پھرتے رہیں گے؟ ان بچوں کا مستقبل کیا ہے. آج مجھ کو سبق صدر پاکستان پرویز مشرف اور آج کے چیف آف آرمی اسٹاف پرویز کیانی صاحب کی وہ بات بہت شدت سے یاد آرہی ہے جو ان دونوں نے ہی کہی تھی کہ، "ان  علاقوں (شمالی اور جنوبی وزیرستان) میں فوجی آپریشن خوشی سے نہیں کیا گیا بلکہ بہت مجبوری میں کیا جا رہا ہے، جس کے لئے پوری قوم کو افسوس ہے." ظاہر ہے جب حالات یہاں تک پہنچ جائیں جب حکموتی رٹ قائم نہ رہے، طاقتور اپنی طاقت کے بل پر حکومت کرنا چاہئے اور معصوم لوگوں کو اپنا غلام بنا لے (جیسا یہاں شمالی وزیرستان) میں دیکھا جا سکتا ہے تو اور کیا ہوگا. پاکستان کو قائم رکھنا ہے اور مسلمان کو مزید شرمندگی سے بچانا ہے تو ہم کو ایسے نام نہاد طاقتور لوگوں سے جان چھڑانا ہی ہوگی. اس کے لئے یہاں اگر فوجی کاروائی کی جاتی ہے تو یہاں کے مقامی لوگوں کو بھی ساتھ  شامل کرنا ہوگا، یہاں کے لوگ خود بہت پریشن ہیں، اور تھک گئے ہیں. ان لوگوں کو سہارا ملے تو یہ خود ہی ان طاقتور لوگوں کے خلاف اٹھ کھڑے  ہونگے.

اس ملاقات میں مجھ کو بہت کچھ دیکھنے، سیکھنے اور سمجھنے کو ملا. ہو سکتا ہے کے میں یہاں سے واپس کراچی جا کر یہاں کے حالات پر اور  لکھ سکوں، فلحال جتنا لکھا ہے اگر میرے دوست (ٹیم آشیانہ کے ساتھ) ووہی لکھ کر بلاگ اور ایمیل کر دیں تو بہت ہوگا. 
اس ملاقات سے واپس آیا تو پتا لگا کے کافی رات ہو چکی ہے، بھوک اور تھکن سے حالت بری تھی، جلدی جلدی کھانا کھایا اور جس کو جہاں جگہ ملی وہی پر کر لیٹ گیا. میں نی جلدی جلدی ڈائری لکھ  ڈالی ہے،پتہ نہیں کل کیا ہو. ابہ سونے کے لئے لیٹ رہا ہوں. 
ہاتھ میں امی کا بھیجا ہوا خط ہے  مگر پڑھنے کی  ہمت نہیں،سینے پر خط رکھ کر لیتا ہوں اور امی کو اپنے ساتھ محسوس کر رہا ہوں. 
انشا الله کل کی ڈائری کے ساتھ حاضر ہونگا.
آپ سب کی دعاؤں کے محتاج 
ٹیم آشیانہ، شمالی وزیرستان.

========================================================================
نوٹ:
  • ٹیم آشیانہ کی یہ ڈائری پڑھنے والے زیادہ تر پاکستانی ہیں یا اردو جانتے ہیں اسی لئے یہ ڈائری اردو میں لکھی جا رہی ہے. مزید اس ڈائری کو انگریزی میں ترجمہ کر کے دینا چاہیں تو وہ بھی یہاں لکھ دی جاۓ گے. 
  • ایسے دوست جو اس ڈائری کو انگریزی میں لکھ کر دینا چائیں وہ ہم سے فوری رابطہ کریں.
     waziristan.dairy@gmail.com
  • وزیرستان ڈائری، ٹیم آشیانہ کے ایک کارکن کی آپ بیتی ہے جس کو لکھنے کی اجازت ٹیم آشیانہ کے کارکنوں کے مشورے سے دی گئی ہے. اس ڈائری کو پبلک کرتے وقت ہم کو حفاظتی اقدامات کے تحت کچھ باتوں کو ایڈٹ کرنا  پڑتا ہے.ہماری کوشش یہی ہوتی ہے کے ڈائری کا اصل مفہوم پڑھنے والوں کو سمجھ میں آتا رہے.
  • اگر کوئی دوست یا ساتھ ڈائری لکھنے والے کارکن سے رابطہ کرنے چاہے تو وہ بھی اپر دی گئی ایمل کر کے رابطہ کر سکتا ہے.
  • ٹیم آشیانہ کو آپ کے مشوروں اور دعاؤں کی ہمیشہ ضرورت  رہتی ہے.
جزاک الله 
ٹیم آشیانہ، شمالی وزیرستان 

Sunday, July 15, 2012

Team Ashiyana "North Waziristan": Details of Funds, Amount, Donations, Collection etc

Dear Friends, Family member (s), Donor (s) and Readers,
Assalam O Alikum,

This is Ahmed (volunteer of Team Ashiyana from Islamabad).
I've assigned to update this blog and make contacts with our friends and family member's to update them about Team Ashiyana activities in North Waziristan.

Another group of friends (volunteer) has reached at Dattah Khail, North Waziristan with a few amount of relief goods:

The details of Funds, Goods and others: (As on July, 12th 2012)

Medicines:
Syrups:
Brofin - 50 bottles, Ponstan - 50 bottles, Panadol - 50 bottles, Calpol - 50 bottles, Mucain - 50 bottles, Ulsanic - 50 bottles, Flygel - 35 bottles, Flyzol - 15 bottles, Britanyl - 30 bottles, Metronidazol - 10 bottles, Liveract - 50 bottles, Augmenten - 25 bottles, Velosef - 25 bottles, Leaderplex - 25 bottles, Promethazine - 25 bottles
Ponstan Fort - 25 bottles, Marzine - 25 bottles, Amoxil - 35 bottles, Toot Siyah - 50 bottles, Banfasha Shehtoot - 50 bottles, Etc 50 bottles.
Purchased from Pak Medico's (Saddar) Rawalpindi.
Amount of Purchased : Rs. 10,000/= (Ten Thousands only)

Tablets:
Perasetamol, Panadol, Panadol Extra, Ponstan Fort, Gravinate, Marzine, Lomotive, Flygel, Bascopan, Metodine, D.F, Amoxil, Augmenton, Folic Acid, Trisil, Velosef, Cafcol,Surbex-z, Surbex-b, etc

Purchased from Pak Medico's (Saddar) Rawalpindi.
Amount of Purchased: Rs. 7,432/= (Seven Thousands & four hundred thirty two)

Other Medicines:

O.R.S, Peditral Water, Dexta Drip, Syringes, Injection for pain relief, multivitamins etc
Purchased from Pak Medico's (Saddar) Rawalpindi.
Amount of purchased: Rs. 5,000/= (Five Thousands Only) 

Food Stuff:
Rice - 250 kg, (50 x 250 = Rs. 12,500/=)

Flour (aata) - 200 kg, (35 x 200 = Rs. 7,000/=)

Beans (Dalain) - 100 kg, (Rs 6,000/=)

Sugar - 100 kg, (55 x 100 = Rs. 5,500)

Tea - 5 kg, (100 x 5 = Rs. 500/=)

Ghee - 25kg, (105 x 25 = Rs. 2,625/=)

Cooking oil - 15 kg, (100 x 15 = Rs. 1,500/=)

Salt - 5 kg, (25 x 5 = Rs. 125/=)

Spices (Masala Jaat) - 5 kg. (Rs. 2,400/=)

Milk - 5kg, (Rs. 1,040/=)

Others - Rs. 2,000/=
Purchased from local market of Rawalpindi
Total Purchased amount:Rs 41,190/= (Fourty one thousands, one hundred and ninty only)

General Items:
  • Plastic Sheets (to cover tents and incomplete Masjid and Madarsah at Datta Khail, North Waziristan, Prevent from rain water): 100 meter "(80 x 100 = Rs.  8,000/=).
  • Clothes for Children & Women (second hand "Lunda"): Rs. 5,000/=.
  •  Candles : Rs 2,000/=.
  • Match Box / Liter: Rs. 500/=.
  • Kerosene Oil: Rs. 1,000/=
  • Kerosene Lamp: Rs. 500/=
  • Biscuits, Wafers, Noddles etc: (Rs. 2,500/= Donated by a human).
  • Plates, Dishes, Cups, Mugs, Spoon etc: Rs. 2,000/=.
  • Cricket Bat, Hockey, Balls, Foot ball etc (donated by Al-hamza Public School, Peshawar).
  •  Book's (from class 2 to 10th): Donated by Ms. Mariya (Peshawar).
Amount of Purchased G.I: Rs. 19,000/= (Nineteen Thousands only)
  

Transportation: 
Amount of Rs. 4,500/= (Four Thousands and five hundred) paid to Khan Goods Services (Rawalpindi). In account of transporation of Good from Rawalpindi to Dattah Khail, North Waziristan.


Amount of Cash Collected in Bheek Mission (Donation):
Karachi: Rs. 11,400/=
Lahore: 4,000/=
Rawalpindi / Islamabad: 5,850/=
Peshawar: 3,800/=
Total Amount:  Rs. 25,050/= (Twenty five thousands and fifty only)


Amount donated by members of Team Ashiyana:
Syeda Faryal Zehra: Rs. 20,000/= (Twenty Thousands)
Ms. Badar-un-Nissa: Rs. 5,000/= (Five Thousands)

Muhammad Asif: 3,000/= (Three Thousands)

Mansoor Ahmed: Rs. 5,000/= (Five Thousands)
Family of Adnan Bhai: 15,000/= (Fifteen Thousands)
Fesal Bhai: Rs 2500/= (Twenty Five Hundred)
Total Amount (Collected): Rs. 50,500/= (Fifty thousands and Five hundred)


Other Donation / Collection / Cash etc:
Bank Account: Nil (No any donation found as on 12th July 2012)
Cash Transfer: Nil (No any call for the transfer received at yet)


Total amount (Donation / Contribution):
Rs. 75,550/= (Seventy five thousands, five hundred and fifty only)
Amount of expense (Purchasing etc)

Rs. 87,122/= (Eighty one thousands, one hundred and twenty two)
Balance Amount:
Rs. 00.00/= (Nil)
Credit / Loan:
Rs. 11,572/= (Eleven thousands, five hundred and seventy two)


 The above mention details are as on July 15th, 2012.


Team Ashiyana is thankful for all of the brother & sisters for there efforts, donations and contribution. May ALLAH give them Ajr-e-Azeem - Ameen.


The amount of above mention are not good enough to run Medical camp (free), Food supply into 50 families (free), To built Masjid and Madarsah, To educate children of North Waziristan and for others social projects of Team Ashiyana. But it can help us to make our continue efforts for the poor, needy, sick people of North Waziristan. 


Team Ashiyana 'B' is on stand by at Pehshawer, Sister Faryal Zehra is not went Ashiyana Camp (North Waziristan) due to security clearence. as many of other members are waiting for the security clearance from the authorities.

We are thankful to the students of Quid-e-Azam International University (Isb), Al-hamza Public School (Peshawar), Ms. Badar-un-Nisa (Khi), Fesal bhai (Lhr) and other friends and volunteer for there work for the social cause of Team Ashiyana.
May ALLAH gives you Ajr-e-Azeem.

For the further details and other, please feel free to contact at:
team.ashiyana@gmail.com
faryal.zehra@gmail.com
s_adnan_ali_naqvi@yahoo.ca

or +92 345 297 1618 (for text and call)

All of friends are requesting to send us an email or text message if they are donating some thing or in term of transfer of any kind of the amount. It will help us to manage our financial details and accounts.  


Jazak ALLAH
Volunteer
Team Ashiyana
North Waziristan - Pakistan